کیاوزیراعظم عمران خان پشاور بی آرٹی کے نامکمل منصوبے کا افتتاح کرنے جارہے ہیں؟

گزشتہ روز نجی ٹی وی چینل نے دعویٰ کیا کہ وزیراعظم عمران خان بی آرٹی کے نامکمل منصوبے کا افتتاح کرنے جارہے ہیں۔

نجی ٹی وی چینل کے مطابق منصوبے میں شامل تین ڈپوز، کمرشل پلازے اور سائیکل ٹریک پر تاحال کام مکمل نہیں کیا جا سکا ہے۔ منصوبہ میں شامل تین ڈپوز پر کام تاحال جاری ہے۔ جبکہ چمکنی، ڈبگری اور حیات آباد ڈپوز پر پارک اینڈ رائیڈ اور کمرشل پلازوں پر کام بھی پایہ تکمیل تک نہیں پہنچایا جا سکا۔

سائیکل ٹریک بی آر ٹی منصوبہ کا حصہ ہے تاہم خیبربازار سے ڈبگری تک تقریباً دو کلومیٹر تک ہی سائیکل ٹریک مکمل ہو سکی ہے۔ سائیکل کے لیے 32 اسٹیشنز قائم کیے جانے تھے لیکن صرف 6 اسٹیشنز پر ہی کام مکمل ہوسکا ہے۔ بی آر ٹی منصوبہ میں 32 اسٹیشنز قائم کئے جانے تھے جن میں ایک اسٹیشن کو کم کرکے 31 کر دیئے گئے۔

نجی ٹی وی چینل کے اس دعوے پر خیبرپختونخوا حکومت کے ذرائع کہنا تھا کہ کمرشل پلازوں، سائیکل ٹریک اور ڈپوز کے بغیر بھی پشاور بی آرٹی فعال ہوسکتی ہے۔ پشاور بی آرٹی کے تمام بس اسٹیشنز ، روٹس ، انڈرپاسز اور فلائی اوورزمکمل ہیں اور پشاور بی آرٹی آزمائشی بنیادوں پر چل رہی ہے۔

ذرائع کے مطابق کمرشل پلازے دراصل گاڑیوں کی پارکنگ کیلئے بنائے جارہے ہیں جو بی آرٹی منصوبے کیلئے آمدن کا ذریعہ بنے گا اور خیبر پختونخوا حکومت کو سبسڈی نہیں دینا پڑے گی۔ اسی طرح سائیکل ٹریک بھی آپشنل ہے جس کا مقصد مسافر کو فیڈرروٹ اور ایک اسٹیشن سے دوسرے اسٹیشن تک رسائی آسانی بنانا ہے اور سائیکل کی سہولت لینے والے سے فی گھنٹہ کے حساب سے چارج کئےجائیں گے۔

سائیکل ٹریک اورکمرشل پلازے کے بغیر بھی پشاور بی آرٹی پر بسیں چلتی رہیں گی اور سائیکل ٹریک اور کمرشل پلازوں کی تکمیل کے بعد خیبرپختونخوا حکومت کو آمدن کی مد میں سالانہ آمدن حاصل ہوگی جس کی وجہ سے خیبرپختونخوا حکومت کو پشاور بی آرٹی کو سبسڈی نہیں دینا پڑے گی۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >