کے الیکٹرک نے نیپرا کو عالمی عدالت جانے کی دھمکی دے دی

کے الیکٹرک نے نیپرا کو عالمی عدالت جانے کی دھمکی دے دی

نجی ٹی وی چینل جیو کے مطابق شہر کراچی کو بجلی فراہم کر نیوالے ادارے کے الیکٹرک نے دھمکی دی ہے کہ اگر نیپرا نے صرف اسے ہی بجلی کی فراہمی سے روکا تو وہ عالمی عدالت انصاف سے رجوع کرے گا۔ کے الیکٹرک کے مطابق اس سے بجلی کی فراہمی کیلئے 2023 تک کا معاہدہ کیا گیا ہے۔

کے الیکٹرک کے مطابق نیپرا کی متوقع کارروائی شنگھائی الیکٹرک پاور کے تحت کراچی میں اربوں ڈالرز کی سرمایہ کاری کے منافی ہے ۔ایسا کوئی بھی اقدام غیر منصفانہ اور بلا جواز ہو گا۔

یہ دھمکی کے الیکٹرک کے ڈائریکٹر کی جانب سے لکھے گئے وفاقی وزیر نجکاری کو خط میں دی گئی ہے۔ اس خط میں کے الیکٹرک نے انکشاف کیا ہے کہ سپریم کورٹ کی جانب سے از خود نوٹس کے تحت کارروائی کی سماعت کے دوران نیپرا نے کراچی کو بجلی کی فراہمی کا معاہدہ قبل از وقت ختم کر نے کا عندیہ دیا جبکہ معاہدے کی مدت 2023 تک کے لئے ہے۔

اس خط کی کاپیاں وفاقی وزیر نجکاری ،وزیر اعظم عمران خان ، مشیر خزانہ ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ ، وزیر منصوبہ بندی و ترقیات اسد عمر ، وزیر توانائی عمر ایوب ، مشیر پٹرولیم ندیم بابر ،خصوصی مشیر شہزاد قاسم ، اٹارنی جنرل آف پاکستان ،چئیرمین سرمایہ کاری بورڈ اور رجسٹرار نیپرا کو بھی بھیجی گئی ہیں۔

کے الیکٹرک کی جانب سے مزید کہا گیا ہے کہ نیپرا کے اقدام سے کے الیکٹرک کی کارکردگی شدید متاثر ہو گی اور معاشرے کے غریب طبقات خمیازہ بھگتیں گے ۔900 میگا واٹ بجلی کی فراہمی کا منصوبہ بھی متاثر ہو گا ۔

کے ای ایس پاور نے ابھی کے الیکٹرک میں 70 کروڑ ڈالرز کی سرمایہ کا ری کی ہے۔ جو پاکستان میں واحد سب سے بڑی براه راست غیرملکی سرمایہ کاری ہے۔ آئندہ 15 سال میں 3 ارب 30 کروڑ ڈالرز کی سرمایہ کاری متوقع ہے۔

واضح رہے کہ گزشتہ روز کراچی کے تاجروں نے عوامی سماعت کے دوران نیپرا کو متوازی بجلی ساز کمپنی بنانے کی پیشکش ہوئی تھی جس پر کے الیکٹرک حکام سیخ پاہوگئے تھے اور عوامی سماعت کے دوران ہنگامہ آرائی بھی دیکھنے میں آئی۔

  • If not possible to cancel KE agreement and give it to new company then allow new companies to distribute electricity in Karachi..I don’t know who have major shares in KE.. but KE is failed corrupt company….

  • According to international laws, no contract can ever be one-sided. KE can’t expect to maintain the contract without doing its share of the agreement. The government can simply cancel the current contract based on non-performance by KE.


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >