سرگودھا: 9 سالہ بھتیجے نے غیرت کے نام پر پھوپھی کو قتل کردیا

سرگودھا میں پیش آیا دلخراش واقعہ، جہاں نو سالہ بچے نے نام نہاد غیرت کے نام پر پھوپھی کو فائرنگ کرکے قتل کردیا۔

9 سالہ نجم الحسن نے بائیس سالہ پھوپھی کو موت کے گھاٹ اتار دیا ہے،ایف آئی آر کے مطابق بچے نے بائیس سالہ کنول کو کسی کے کہنے پر قتل کیا ہے۔

پولیس کے مطابق سرگودھا کے نواحی گاؤں 104 جنوبی کی رہائشی خاتون نے 10 برس قبل پسند کی شادی کی تھی ۔ کنول پروین کے اہل خانہ کو اس طرح شادی کرنا پسند نہ تھا جس کے باعث وہ ناراض تھے۔

14 ستمبر کو کنول پروین کو ماموں کے بیٹے کی پیدائش پر میکے بلوا یا گیا تھا جہاں اس کے 9 سالہ بھتیجے نے اچانک پستول اٹھا کر فائر کر کے پھوپھو کو قتل کر دیا۔

پولیس ذرائع کے مطابق کچھ عرصہ قبل کنول کی اس کے خاندان سے صلح ہوئی تھی۔ 14 ستمبر کو کنول پروین اپنے ماموں کے بیٹے کی پیدائش پر انہیں مبارکباد دینے اپنے میکے آئی تھی، کنول جب اپنے میکے پہنچی تو گھر میں ان کا رشتہ دار وقاص کنول کے بھتیجے کو پستول چلانے کی تربیت دے رہا تھا ۔ اسی رشتہ دار نے بچے سے اپنی پھوپھی پر فائرنگ کرنے کا کہا۔

پولیس کا دعویٰ ہے کہ 9 سالہ لڑکے سے غیرت کے نام پر پلاننگ کرکے قتل کروایا گیا۔ کنول پروین نے پسند کی شادی کی تھی ۔

تھانہ صدر پولیس نے قتل کرنے اور قتل کی تربیت دینے والے دونوں ملزمان کیخلاف مقدمہ درج کرتے ہوئے کاروائی کا آغاز کر دیا۔

  • او سیاست ڈاٹ پی کے پائی
    یہ کیا فضول خبریں چھاپ رہے ہو ؟
    ٢٢ سالہ لڑکی نے دس سال پہلے ١٢ سال کی
    عمر میں پسند کی شادی کی تھی ؟
    ٩ سالہ بچہ اسلحہ چلانے کی تربیت لا رہا تھا ؟
    کیا تم لوگوں کی عقل گھاس چرنے گئی ہوئی ہے ؟
    یا ہمیں چوتیا سمجھا ہوا ہے؟
    کوئی خدا کا خوف کرو — تمہارا میعار اتنا گر چکا ہے ؟


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >