نواب آف جونا گڑھ نے بھارت کا اصل چہرہ بے نقاب کر دیا

نواب آف جونا گڑھ نے تقسیم ہندوستان کی دردناک کہانی دنیا کے سامنے رکھتے ہوئے بھارت کا مکروہ چہرہ بے نقاب کرتے ہوئے کہا کہ بھارت کسی ملک کا نہیں بلکہ منافقانہ، دوہرے معیار، اقلیتوں اور بنیادی حقوق کی پامالی کا نام ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ بھارت نے 27 اکتوبر 1947 مہا راجہ کی سازش پر نام نہاد الحاق کو بُنیاد بنا کر کشمیر پر فوج کشی کر کے قبضہ کر لیا۔ صرف 13 دن بعد 9 نومبر1947ء کو نواب آف جونا گڑھ کے پاکستان سے الحاق کے جواب میں جونا گڑھ پر فوج کشی کر کے زبردستی قبضہ کر لیا۔

نواب آف جونا گڑھ نے بھارت کا مکروہ چہرہ بے نقاب کرتے ہوئے انکشاف کیا کہ جونا گڑھ کی ریاست کا پاکستان سے الحاق جونا گڑھ سٹیٹ کونسل کی منظوری سے ہوا تھا، جسے بھارت نے بندوقوں کےزور پر روند ڈالا اور جونا گڑھ کے پاکستان کے ساتھ قانونی الحاق کو غیر قانونی قرار دے دیا۔

انہوں نے اپنے بیان میں کہا کہ بھارت نے جونا گڑھ کے پاکستان کے ساتھ قانونی الحاق کو بندوقوں کے زور پر روندتے ہوئے جونا گڑھ میں بندوقوں کے سائے میں نام نہاد ریفرنڈم منعقد کروا دیا، جس میں بھارت نے بندوقوں کے زور پر ریفرنڈم کرواتے ہوئے اپنا مطلوبہ ہدف حاصل کیا، بھارت کیوں کشمیر میں اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق ریفرینڈم نہیں کرواتا؟ اگر وہ ریفرنڈم کا اتنا ہی دلدادہ ہے تو کشمیر میں ریفرنڈم کرائے، تاکہ دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہو جائے۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >