یہودیوں کے لیے متحدہ عرب امارات میں کوشر ریسٹورنٹ کھولنے کی تیاریاں شروع

یہودیوں کے لیے متحدہ عرب امارات میں کوشر ریسٹورنٹ کھولنے کی تیاریوں شروع

غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق متحدہ عرب امارات میں یہودیوں کے لئے دبئی میں دنیا کی بلند ترین عمارت برج الخلیفہ کے تحت چلنے والے ہوٹل ارمانی میں پہلا کوشر ریسٹورنٹ کھولنے کے لئے تیاریوں کا آغاز کر دیا گیا ہے، اس کے علاوہ اسرائیل اور یو اے ای میں تعلقات معمول پر لانے کے معاہدے کے بعد سے متحدہ عرب امارات میں موجود کی ریسٹورانوں اور کیٹررز کی کوشر ریسٹورنٹ کھولنے کے لیے تیاریوں میں مزید تیزی آگئی ہے۔

خبر رساں ایجنسی کے مطابق متحدہ عرب امارات کے متعدد قوانین کوشر پکوانوں کی تیاری کیلئے ساز گار نہیں ہیں، جس کے سبب کوشر پکوانوں کی تیاری میں استعمال ہونے والے اجزاء دبئی کی مقامی مارکیٹوں میں باآسانی دستیاب نہیں ہیں، کیونکہ کوشر ریستوران میں یہودی عقائد کے مطابق ذبح کیے گئے جانوروں کا گوشت استعمال کیا جاتا ہے۔

دوسری جانب ارمانی ہوٹل کے شیف فیبین فائیولے کا اس حوالے سے خبر رساں ایجنسی سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ ہم مہینوں سے اپنے ہوٹل کے عملے کو کوشر ڈشز تیار کرنے اور دوسرے کاموں کی تربیت دے رہے ہیں، اس کے علاوہ ہم انہیں اس بات کی بھی تربیت دیتے ہیں کہ وہ کوشر ڈشز تیار کرنے میں کن چیزوں کا استعمال کر سکتے ہیں اور کن چیزوں کا استعمال نہیں کر سکتے۔

یہودیوں کے لیے متحدہ عرب امارات میں کوشر ریسٹورنٹ کھولنے کی تیاریوں شروع

ارمانی ہوٹل کے شیف فیبین فائیولے کا کہنا تھا کہ متحدہ عرب امارات کی نئی مارکیٹ میں جب تک مقامی سپلائرز کوشر پکوان میں استعمال ہونے والے بنیادی اجزاء کی موجودگی یقینی نہیں بناتے تب تک کوشر فوڈز میں استعمال ہونے والا مخصوص سامان میسر نہیں ہوگا، کوشر پکوان بنانے کیلئے کچھ چیزوں کا دستیاب ہونا ضروری ہے جو فی الحال مقامی مارکیٹ میں دستیاب نہیں۔

یہودیوں کے لیے متحدہ عرب امارات میں کوشر ریسٹورنٹ کھولنے کی تیاریوں شروع

انہوں نے کہا کہ کھانے بنانے کیلئے بعض جانوروں اور سمندری حیات کا گوشت استعمال کرنا نیز دودھ سے بنی مصنوعات کو مکس کرنا ممنوع ہے، جس کی تعلیم ہم اپنے عملے کو دے رہے ہیں۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >