نیب نے نواز شریف،احسن اقبال کے خلاف نئے ریفرنسز دائر کرنے کی منظوری دے دی

چیئرمین نیب جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال نے اپنی صدارت میں ہونے والے نیب ایگزیکٹیو بورڈ کے اجلاس سابق وزیراعظم نواز شریف، احسن اقبال،  اعزاز احمد چوہدری، آفتاب سلطان، فواد حسن فواد کے خلاف بدعنوانی کے نئے ریفرنسز دائر کرنے کی منظوری دے دی ہے۔

قومی احتساب بیورو کی جانب سے جاری کیے گئے اعلامیے کے مطابق چیئرمین نیب کی زیر صدارت ہونے والے اجلاس میں نواز شریف اور احسن اقبال کے خلاف بدعنوانی کے ریفرنس دائر کرنے کی منظوری دی گئی ہے، احسن اقبال پر اختیارات کا ناجائز استعمال، اسپورٹس سٹی کا اسکوپ 3 کروڑ سے 3 ارب روپے تک بڑھانے کا الزام ہے۔

چیئرمین نیب نے اجلاس میں سابق ڈی جی پاکستان اسپورٹس بورڈ اختر نواز گنجیرا کے خلاف بھی ریفرنس دائر کرنے کی منظوری دے دی ہے، اسی طرح سابق سیکریٹری خارجہ اعزاز احمد چوہدری، سابق ڈی جی آئی بی آفتاب سلطان، سابق پرنسپل سیکریٹری وزیراعظم فواد حسن فواد کے خلاف بھی بدعنوانی کے ریفرنسز دائر کرنے کی منظوری دی گئی ہے۔

نیب ایگزیکٹو بورڈ کے اجلاس میں چیئرمین نیب نے سابق ممبر پلاننگ اینڈ ڈیزائن عبدالعزیز قریشی، سابق ڈی جی پلاننگ غلام سرورسندھو، محبوب علی خان، سابق ڈائریکٹر وقار علی خان، سابق ڈپٹی ڈائریکٹر مسعود الرحمن، سابق اسٹیٹ منیجمنٹ آفیسر محمد اشفاق، سابق سی ای او این ٹی ایس ہارون سمیت دیگر افسران اور سابق چئیرمین سی ڈی اے فرخند اقبال کیخلاف بھی بدعنوانی ریفرنس دائر کرنے کی منظوری دے دی ہے۔

نیو اعلامیہ کے مطابق اجلاس میں کلینک کے پلاٹ کو مبینہ طور پر کمرشل مقاصد کے لئے استعمال کرنے کے الزام میں سابق اسٹیٹ منیجمنٹ افسر لطیف عابد، سابق ڈی ڈی ای ایم رحیم خان، شیراعظم وزیر کیخلاف بدعنوانی ریفرنس دائر کرنے کی منظوری دی ہے، اس کے علاوہ ملزمان پر غیر قانونی طور پر زمین کی لیز کی مدت میں بھی اضافہ کرنے کا الزام ہے۔

قومی احتساب بیورو کے جاری اعلامیے میں مزید بتایا گیا ہے کہ نیب کے ایگزیکٹیو بورڈ کے اجلاس میں چیئرمین نیب نے چیف ایگزیکٹو آفیسر عبدالمعید فاروقی اور میسرز آئیڈیل ہائیڈروٹیک سسٹم کے خلاف بھی بدعنوانی کا ضمنی ریفرنس دائر کرنیکی منظوری دی ہے، ملزمان نے مبینہ طور پر اپنے اختیارات کا ناجائز استعمال کر کے قومی خزانے کو 9.012 ارب روپے کا نقصان پہنچایا ہے۔

چیئرمین نیب کی زیر صدارت ہونے والے اجلاس میں مجموعی طور پر چار انویسٹی گیشنز کی منظوری بھی دی گئی ہے، جن میں پاکستان تحریک انصاف کے ایم پی اے علیم خان اور سابق صوبائی وزیر قانون رانا ثناء اللہ کے خلاف تحقیقات شامل ہے۔


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>