پاکستان میں صرف بارہ سے چودہ سال کی گیس باقی ہے، مشیر پیٹرولیم ندیم بابر

پاکستان میں گیس کے ذخائر ختم ہونے لگے،پاکستان میں صرف بارہ سے چودہ سال کی گیس باقی ہے،بی بی سی کوانٹرویو میں مشیر پیٹرولیم ندیم بابر نے انکشاف کردیا، کہا کہ پیداوار میں اضافے پر توجہ دے رہے ہیں، نتائج تین سے چار سال بعد سامنے آئیں گے، آئندہ سال جون تک گیس کی قیمت نہ بڑھانے کا اعلان کردیا۔

ندیم بابر نے کہا کہ گیس کی پیداوار تیزی سے گررہی ہے،صرف بارہ سے چودہ سال کی گیس بچی ہے۔بی بی سی کو انٹرویو میں ندیم بابر نے کہا ملک میں گیس کے نئے بڑے ذخائردریافت نہیں ہوئے تو گیس کی قلت کا سامنا ہوگا،انہوں نے بتایا کہ پانچ سال میں کوئی نیا بلاک ایوارڈ نہیں کیا گیا۔

مشیر پیٹرولیم کا کہنا تھاکہ موجودہ حکومت عالمی منڈی سے سستی گیس خرید رہی ہے،اس لئے گیس کی قیمت نہیں بڑھے گی،لیکن رواں سال موسم سرما میں گیس کی کمی ہوگی،ندیم بابر کا کہنا تھا کہ پیداوار اور دریافت پر توجہ بڑھائی ہے،جس کے نتائج تین سے چار سال بعد سامنے آئیں گے۔

بی بی سی سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے ندیم بابر کا کہنا تھا کہ رواں برس سردیوں میں ملک میں گیس کی قیمت بالکل نہیں بڑھائی جائے گی اور اس مالی سال کے آخر یعنی جون 2021 تک صارفین کو موجودہ قیمت پر ہی گیس فراہم کی جائے گی۔

ندیم بابر کا کہنا تھا کہ موجودہ حکومت گذشتہ دور کے مقابلے میں عالمی منڈی سے کہیں سستی گیس خرید رہی ہے اور یہی وجہ ہے کہ اس سال قدرتی گیس کے صارفین کے بلوں میں گیس کی قیمت نہیں بڑھے گی۔

وزیراعظم عمران خان پہلے ہی کہہ چکے ہیں کہ اس سال سردیوں کے موسم میں ملک میں گیس کی کمی ہو گی،اکنامک سروے آف پاکستان کے مطابق پاکستان میں گیس کی سالانہ طلب 4 ارب کیوبک فٹ ہے جبکہ اس کی طلب تقریباً 6 ارب کیوبک فٹ ہے۔

  • What non-sense, if this much reserve is left then ban the fucking CNG! I don’t know whose idiotic idea was to use gas for transport. Suckers must understand that if they use all gas for transport then how the next generation are going to cook?


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >