احسن اقبال نے عالمی میڈیا پر بھی اپنی سبکی کرانے میں کوئی کسر نہ چھوڑی

غیر ملکی نیوز چینل الجزیرہ نے پاکستان میں سیاسی طور پر پیدا ہونے والی حالیہ صورتحال پر گفتگو کرنے کے لیے پاکستان سے چند شخصیات کو پروگرام میں مدعو کیا تو احسن اقبال نے مخالف مہمان کا نام جان کر شرکت سے انکار کر دیا۔

تفصیلات کے مطابق الجزیرہ نیوز چینل کے پروگرام اے جے سٹریم میں میزبان نے بتایا کہ وہ پاکستان میں مہنگائی، بے روزگاری اور دیگر مسائل کے باعث شروع ہونے والے احتجاج اور اس کے نتیجے میں پیدا ہونے والے مسائل پر گفتگو کرنے والے ہیں۔

میزبان فیمی اوکی نے بتایا کہ پروگرام میں ان مسائل پر بحث کے لیے حکومت کی جانب سے ترجمانی کیلئے وزیر خزانہ و صحت خیبر پختونخوا تیمور خان جھگڑا جبکہ اپوزیشن اور پی ڈی ایم کی جانب سے اپنا موقف پیش کرنے کے لیے سابق وزیر داخلہ احسن اقبال کو دعوت دی گئی ہے اور وہ بات کرنے کے لیے تیار بھی تھے مگر انہوں نے شرکت سے انکار کر دیا۔

میزبان نے بتایا کہ جب احسن اقبال کو بتایا گیا کہ ان کے ساتھ پروگرام میں تیمور خان جھگڑا شرکت کریں گے تو احسن اقبال نے یہ کہتے ہوئے انکار کر دیا کہ کسی صوبائی وزیر کے ساتھ بحث کرنا ان کی پارٹی پالیسی کے خلاف ہے۔

اس کے بعد تیمور خان جھگڑا سے میزبان نے پوچھا کہ کیا وہ اس ماجرے سے آگاہ ہیں کہ آج کی بحث میں ان کے مقابلے میں کوئی نہیں اور انکار کی وجہ بتائی جس پر صوبائی وزیر نے مسکراتے ہوئے جواب دیا کہ وہ اس کو میدان چھوڑ کر بھاگ جانا ہی کہیں گے۔

اسی معاملے پر تحریک انصاف کے میڈیا سیل کی جانب سے ٹویٹ کیا گیا کہ کیا احسن اقبال اس بات کا جواب دے سکتے ہیں کہ کیوں وہ انٹرنیشنل میڈیا پر پی ڈی ایم کے عہدیدار کے طور پر جواب نہیں دے سکے وہ عدالتوں سے مفرور اور سزا یافتہ شخص کو تو لیڈر مان سکتے ہیں مگر خیبرپختونخوا کے ایک وزیر سے بحث نہیں کر سکتے۔

  • ضیا نے چن چن کر شوریاں اور گشتیاں بھرتی کی تھیں اپنی حکومت میں
    جن میں سے ایک نثار فاطمہ جو پھاتاں نارووالی کے نام سے مشہور تھی اسکو اسکا بیٹا حرامی بجو خود اپنے ساتھ امب لینے۔ ضیا کے پاس لے جاتا تھا اور وہ خود بھی ضیا کے فوجی گٹر میں پیدا ہوا فوجی ضیا کی حکومت کی شوری کے گھر کسی کی بد کاری اور حرام۔ کاری سے پیدا ہوا مگر ہمیشہ بھونکا بھی ہمیشہ فوج کے خلاف جو ایک حرام کا نطفہ ہونے کی کنفرم نشانی ہوتی ہے کہ جو فوج پیدا کرے اپنے گٹر سے نکالے اسی فوج کے خلاف بھونک کر انڈین بیانیئے کی اور حمایت پاکستان فوج کی مخالفت کرو


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >