امریکا نے پاکستان پر دباؤ ڈال کر افغان جنگ کا حصہ بنوایا:وزیراعظم کا جرمن جریدے کو انٹرویو

امریکا نے پاکستان پر دباؤ ڈال کر اسے افغان جنگ کا حصہ بنوایا، افغان امن عمل میں کردار ادا کرنے پر خوشی ہے، وزیراعظم عمران خان

وزیراعظم عمران خان نے جرمن خبر رساں ادارے کو دیئے گئے حالیہ انٹرویو کے دوران افغان امن عمل سے متعلق گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ امریکا نے پاکستان پر دباؤ ڈال کر اسے افغان جنگ کا حصہ بنوایا، پاکستان پر افغانستان میں طالبان کو استعمال کرنے کا الزام غلط ہے، افغان امن عمل میں کردار ادا کرنے پر خوشی ہے۔

وزیراعظم نے مقبوضہ کشمیر سے متعلق سوال کے جواب میں کہا کہ پاکستان پر مقبوضہ کشمیر میں جنگجو بھیجنے کا الزام بھی درست نہیں، مجھ میں اور امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ میں کافی چیزیں مشترک ہیں، ہم چاہتے ہیں امریکا مسئلہ کشمیر پر پاکستان اور بھارت کے ساتھ یکساں رویہ اپنائے۔

انہوں نے کہا کہ بھارت ایک فاشسٹ ملک ہے اور نریندر مودی کی حکومت نازیوں سے متاثر ہے، آر ایس ایس ہٹلر کو ہیرو مانتی ہے اور وہ بھارت سے مسلمانوں کو ختم کرنا چاہتی ہے۔
وزیراعظم نے اسرائیل پر موقف ایک بار پھر واضح کر دیا اور کہا کہ میں نے اقتدار میں آتے ہی یمن میں ثالثی کی پیشکش کی، سعودی عرب اور ایران سے بات کی، کسی کو امن مذاکرات پر مجبور نہیں کرسکتے، فلسطین کی آزادی تک پاکستان اسرائیل کو تسلیم نہیں کرے گا۔

ملک میں جاری سیاسی بے چینی پر وزیراعظم نے کہا کہ حالیہ جلسے اور جلوسوں کے ذریعے اپوزشن مجھے بلیک میل کر کے کرپشن کیسز سے پیچھے ہٹانا چاہتی ہے۔ پاکستان میں وسائل کی کمی نہیں، کرپٹ لیڈرشپ کی وجہ سے ملک غریب ہے، پاکستان سے لاکھوں ڈالرز لوٹ کر لندن میں فلیٹس خریدے گئے۔

فرانس میں گستاخانہ خاکوں کے معاملے پر وزیراعظم نے سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں اظہار رائے کی آزادی مغربی ممالک سے زیادہ ہے، سچی اور حقائق ہر مبنی تنقید کو قبول کیا جائے گا۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >