وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے صوبے میں انصاف میڈیسن کارڈ کا اجرا کردیا

لاہور: وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے صوبے میں انصاف میڈیسن کارڈ کا اجرا کردیا، مذکورہ کارڈ کے ذریعے شہریوں کو مفت ادویات دی جائیں گی۔

پنجاب میں انصاف میڈیسن کارڈ ہیپاٹائٹس، ایڈز اور ٹی بی کے مریضوں کے لیے جاری کیا گیا ہے، انصاف میڈیسن کارڈ کے اجراء سے متعلق وزیراعلیٰ پنجاب کا کہنا ہے کہ میڈیسن کارڈ سے ہیپاٹائٹس، ایڈز اور ٹی بی کی مفت دواؤں کا آغاز کیا ہے، مریضوں کی سہولت کے لیے آسان طریقہ کار وضع کیا گیا ہے۔

انہوں نے مزید بتایا کہ ٹی ایچ کیواسپتال یا ڈی ایچ کیواسپتال میں بائیومیٹرک تصدیق ہوگی، مریض کو رجسٹر کرکے انصاف میڈیسن کارڈ جاری کردیا جائے گا، مریض کسی بھی متعلقہ سینٹر سے مفت ادویات لے سکے گا۔

وزیراعلیٰ نے اسپتالوں میں ہیپاٹائٹس، ایڈز اور ٹی بی کے مریضوں کے لیے ڈیسک بنانے کی ہدایت کردی۔

عثمان بزدار کا کہنا تھا کہ مجموعی طورپر 174882 مریضوں میں انصاف میڈیسن کارڈ تقسیم ہوں گے، وہ دن دورنہیں جب پنجاب کے ہر شہری کو مفت علاج کی سہولت ملے گی۔

  • اس پہ کسی جج یا عدالت نے یہ کہہ دینا ہے کہ انصاف کارڈ کیوں رکھا۔۔۔۔ حالانکہ ںے نظیر، یا بابا خان کے نام پہ کسی کے پیٹ پہ مروڑ نہیں اٹھا۔۔۔

    اگر کوئی کہے تو شائد جواب آئے کہ چونکہ وہ مر چکے ہیں اسلیے انکے نام استعمال کر سکتے ہیں تو پنجاب حکومت جواب کہ ہم نے انصاف نام اسلیے رکھا کیونکہ انصاف بھی مر چکا ہے۔۔۔

  • بے نظیر ۔کارڈ۔ انصاف کارڈ۔ صحت کارڈ۔ بزرگ کارڈ۔ میڈیسن کارڈ۔ بس عوام کی جیب کارڈوں سے بھرتے رہنا جو کسی کام کے نہیں ہیں اور کچھ نہ کرنا

    • اپنے کارڈز پی ٹی آئی کے کھاتے میں کیوں ڈال رھے ہو کچھ تو شرم آنی چاہیے ھے کچھ تو حیاء آنی چاہیے کمال ھے بابا

      • میرا کسی بھی پارٹی سے تعلق نہیں ہے میں نے لوگوں کو صحت کارڈ کے لیے لائنوں میں لگ کر ذلیل ہوتے دیکھا ہے ۔روزانہ عوام جب ہم سے سوال کرتی تھی صحت کارڈ کہاں استعمال ہوگا ہمارے پاس ان پرائیوٹ ہسپتالوں کے نام ہوتے تھے جہاں کوئی سروس نہیں دی جاتی تھی

        • جناب صحت کارڈ یونیورسل اور کوالٹی صحت کی طرف اہم اور ضروری ترین قدم تھا ۔۔ صحت انفراسٹرکچر میں بہتری وقت کے ساتھ آئے گی ، چند ماہ و سال میں نہیں ۔ جب صحت کارڈ سے اربوں روپے صحت کے شعبے میں جائیں گے ا تو اسی حساب سے بتدریج پہسپتال ڈاکٹر اور نرسیں بھی آئیں گی ۔۔ اور جیسے جیسے وقت کے ساتھ لوگ اس کارڈ کی رقم کو اپنی ذاتی رقم سمجھیں گے ویسے ہی وہ اسکی حفاظت بھی کریں گے اوربہتر سہولیات بھی مانگیں گے۔مریض ہی اچھے برے کا فیصلہ کرے گا۔ جب اربوں موجود ہوں گے تو سرکاری اور پرائیویٹ ڈاکٹر مقابلہ بھی کریں گے اور کارڈ کی رقم آخرکار ان ہسپتل میں ہی انوسٹ ہو گی۔۔ یونیورسل یعنی سب کیلئے پیلتھ فنڈ کا اتنا اثر ہوتا ہے کہ سات دس برس میں صحت کا شعبہ ہر سمت میں گنی گنا بڑھ جائے گا ۔۔ آپکے اعتراضات بالکل درست ہوں گے مگر ہیلتھ کارڈ ہی ان اعتراضات کا حل ہے، ہمارے جیسے غریب ملک ہر بیماری کیلئے بطور انسانی حق علاج نہیں دے سکتے امیر ملکوں میں بھی یہ بہت مشکل ہے اسلئے کچھ مہنگی اور کچھ بیماریوں کا علاج اس ذریعے نہ ہو سکے گا مگر اس کم رقم میں بچوں اور ماوں کا بھرپور علاج ہو جائے گا۔۔ سو ان کوتاہیوں پر تنقید اور بہتری کی گنجائش ہمہشہ رہے گی ، ہر جگہ صحت کے شعبے میں ڈاکٹر ہسپتال اور حکومت ایک قدم پیچھے ہی رہتے ہیں یونیورسل ہیلتھ کارڈ اپنی سب کمیوں کے باوجود اس حکومت کا اہم ترین سیساسی اور صحت عامہ کی بھلائی کا کام شمار ہو گا

  • پنجاب کے سابقہ حکمرانوں جن میں شری شہباز شریف گنجو شریف اور شری نواج شریف دونوں خاندانوں نے پنجاب صوبہ کو لوٹ مار کے طور پر استعمال کیا لیکن غریب ضرورت مند عوام کو بنیادی سہولیات فراہم کرنے میں بری طرح ناکام ہونے لیکن آپنی کرپشن کی ایمپائر اسٹیٹ پاکستان کے ساتھ ساتھ دنیا بھر میں بنانے میں خوب کامیاب رھے اور ساتھ ساتھ عوام سے ذلالت کے تمغے حاصل کرنے میں کامیاب بھی کامیاب رھے


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >