لاہور میں 4 افراد کی نرس کے ذریعے بیوٹیشن لڑکی سے زیادتی اور بلیک میلنگ

لاہور کے علاقے یوحنا آباد کی رہائشی متاثرہ ‏خاتون نے تھانہ نشتر کالونی میں درخواست دی جس میں مؤقف اپنایا ہے کہ چھ ماہ قبل آسیہ نامی نرس نے میک اپ کے بہانے مجھے اپنے گھر بلایا، جہاں ملزمان سرفراز جیون، سلیم، نذیر اور منیر مسیح پہلے سے موجود تھے.

متاثرہ خاتون بیوٹی پارلر چلاتی ہے جب وہ میک اپ کرنے کیلئے آسیہ کے گھر پہنچی تو آسیہ بی بی نے اسے نشہ آور جوس پلا دیا جس کے بعد وہ بے ہوش ہو گئی اور چاروں ملزمان نے اسے اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنایا.

متاثرہ خاتون کے مطابق ہوش آنے پر شور مچایا تو ملزمان نے دھمکی دی کہ اگر کسی کو بتایا تو اس سے کی گئی زیادتی کی یہ ویڈیو وائرل کر دی جائے گی.

خاتون نے یہ بھی کہا کہ اس ڈر سے کہ کہیں ویڈیو وائرل نہ ہو جائے وہ دوبارہ ملزمان کے بلانے پر گئی اور اسے پھر زیادتی کا نشانہ بنایا گیا اور بتانے کی صورت میں اسے اور اس کے بھائیوں کو جان سے مارنے کی دھمکیاں دی گئیں.

تھانہ نشتر کالونی کے متعلقہ تفتیشی افسر کے مطابق خاتون آسیہ بی بی، ملزم سرفراز جیون، سلیم، نذیر اور منیر مسیح کے خلاف درخواست کے مطابق مقدمہ درج کر لیا گیا ہے مگر معاملہ مشکوک ہے. تفتیشی افسر کے مطابق تحقیقات سے مزید حقائق سامنے آئیں گے، فی الحال کچھ بھی کہنا قبل از وقت ہوگا.

    • In Pakistan there is need to better prosecution and implementation of existing laws.
      Laws exist but there are loopholes in prosecution.
      There is no witness protection. The prosecutors themselves cut the deal with the accused and by the time the case arrive in courts the case is so weak that culprits have 99% guarantee of the case being dismissed.
      There should be punishment for the prosecutors if they continue to fail proving their case in courts.


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >