پاکستانی نژاد امام مسجد کو 18 ماہ قید کی سزا، فرانس داخلے پر تاحیات پابندی عائد

پاکستانی نژاد امام مسجد کو 18 ماہ قید کی سزا، فرانس داخلے پر تاحیات پابندی عائد

غیر ملکی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق فرانس نے تنگ نظری کا مظاہرہ کرتے ہوئے پاکستانی نژاد امام مسجد کو 18 ماہ قید کی سزا سناتے ہوئے فرانس میں دوبارہ داخلے پر تاحیات پابندی عائد کر دی ہے، فرانس کی پنتواس کی عدالت نے 33 سالہ امام مسجد کو سوشل میڈیا پر انتہا پسندانہ جذبات کو اکسانے کے الزام میں سزا سنائی ہے۔

غیر ملکی میڈیا کی رپورٹ کے مطابق 33 سالہ پاکستانی نژاد امام مسجد نے شاٹ ویڈیو شیئرنگ ایپ ٹک ٹاک پر 9 دسمبر کو کہا تھا کہ "وفادار مسلمان پیغمبر اسلام کے لیے خود کو قربان کرنے کے لیے تیار ہے” جب کہ 10 دسمبر کی ویڈیو میں ’غیر مسلموں اور کافروں پر حملہ کرنے، اور انہیں جہنم بھیجنے کی بات کی تھی”۔

پاکستانی نژاد امام مسجد کی جانب سے 25 دسمبر کو گستاخانہ خاکے شائع کرنے والے میگزین چارلی ہیبڈو کے دفتر پر حملہ کرنے والے کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے اس کے اقدام کو سراہا گیا تھا، جس پر فرانس کی پولیس نے اسے گرفتار کر کے اس کے خلاف مقدمہ درج کرکے عدالت میں پیش کیا تھا۔

دوسری جانب فرانسیسی اور جرمن میڈیا پر یہ بات سننے میں بھی سامنے آئی ہے کہ پاکستانی نثراد 33 سالہ امام مسجد نے عدالت میں سماعت کے دوران متعدد بار اپنی حرکت پر معذرت بھی کی اور یہ بھی کہا کہ اس نے ایسا صرف ٹک ٹاک پر فالورز حاصل کرنے کے لیے کیا تھا اور اسے ایسے قوانین کا نہیں پتا تھا جس کے تحت اسے سزا سنائی جا رہی ہے، تاہم عدالت نے اس کی استدعا مسترد کرتے ہوئے اسے سزا سنادی۔

  • اس میں تنگ نظری کی کیا بات ہے، وہ سیدھا سیدھا لوگوں کو وائلنس پر اکسا رہا تھا، فرانس نے بہت اچھا کیا۔۔ اٹھارہ ماہ کی سزا بھی اس کیلئے کم ہے۔۔

  • complain bhi Muslims nayhi ki hogi. French/Europen born muslims don’t care about blasphemy because it is not illegal there. A different strategy is required to handle this situation. PM Imran Khan is making progress in the right direction in this regard.

  • لو جی۔ امام صاحب کا سارا عشق رسول عدالت میں نکل گیا تھا۔ موصوف نے اپنے کیئے پر بار بار معافی مانگی اور کہا کہ میں کوئی عاشق رسول نہیں ہوں بلکہ ٹک ٹاک پر فالوورز بڑھانے کیلئے یہ ویڈیو بنائی۔ 😂😂

    • دوسری جانب فرانسیسی اور جرمن میڈیا پر یہ بات سننے میں بھی سامنے آئی ہے کہ
      سنی سنائی بات۔
      بہرحال جو بھی ہو، مولانا بات ٹھیک کر رہے تھے۔ مقصد چاہے جو بھی ہو۔

  • میرے خیال میں یہ یورپ سمیت دنیا کے ہر اچھے ملک میں بین ہوجاے گا، ویسے بھی اس سے بڑی توہین رسالت کیا ہوگی کہ لوگوں کو فالوورز کی تعداد بڑھانے کیلئے قانون توڑنے کیلئے اکسا رہا تھا ایسا لعنتی تو جیل میں ہی سڑنا چاہئے

  • فرانسیسی حکومت کی منافقت
    مولانا صاحب فریڈم آف ایکسپریشن کا استعمال کررہے تھے، مگر صرف بیا ن دینے پر دھر لئے گئے۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >