دنیا کی سب سے بڑی ہیلتھ کمپنی پاکستان آنے کو تیار ہے : وفاقی وزیر فواد چودھری

ڈاکٹری کے شعبے کو آئندہ 15 سالوں میں بہت بڑا چینلج درپیش ہوگا، وفاقی وزیر سائنس و ٹیکنالوجی فواد چودھری

وفاقی وزیر فواد چوہدری نے قائداعظم یونیورسٹی میں سسٹین ایبل ڈیولپمنٹ گول وال کا افتتاح کردیا اس موقع پر انہوں نے کہا کہ مصنوعی انٹیلی جنس کی مدد سے آنے والے 15 سال میں انقلاب برپا ہو گا جس کے باعث ڈاکٹری کے شعبے سے منسلک افراد کو بہت سخت چینلج درپیش ہوگا۔ انہوں نے کہا آرٹیفیشل انٹیلی جنس جنرل فزیشن کے لیے مشکلات پیدا کر دے گی۔

انہوں نے کہا کہ دنیا میں تبدیلی یونیورسٹیاں ہی لائی ہیں،امریکا میں یونیورسٹی کے ذریعے ہی تبدیلی آئی، معاشرے کی ترقی کا اندازہ ملک کی یونیورسٹیوں سے لگایا جاسکتا ہے۔ 70 سال کے بعد آج پاکستان میں 200 سے زائد یونیورسٹیاں ہیں، ہماری بہت سی یونیورسٹیوں نے انٹرنیشنل معیار کا کام بھی کیا ہے، بہت سے پاکستانیوں نے پاکستان سے باہر جا کر زیادہ اچھا کام کیا ہے، طلبہ کو چاہیے اب مقامی مسئلوں کو دیکھے اور ان کے حل نکالیں۔

فواد چودھری نے کہا یونیورسٹیز ہی وہ جگہ ہیں جو آپ کو پلاننگ کرکے دے سکتی ہیں، ہماری وزارت نے پاکستان کی پوری ہییت تبدیل کرکے رکھ دی ہے، اگلے چار سے چھ ماہ میں ڈائیلسز مشین اور ایکسرے مشین بھی اپنی بنائیں گے، دنیا کی سب سے بڑی ہیلتھ کمپنی پاکستان آنے کو تیار ہے۔

وزیر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی نے بتایا کہ حکومت طلبا کی سکالر شپس سے متعلق پلان بنا رہی ہے جس کے تحت میٹرک میں بہترین کارکردگی پر طلبا کو 10 ہزار ، انٹرمیڈیٹ میں اچھی کارکردگی دکھانے والوں کو ماہانہ12 ہزار وظیفہ دیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ریاضی کے مضمون میں ٹاپ کرنے والے طلبا کو الگ سے وظائف دیئے جائیں گے۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ حکومت میں دو ہی مسئلے ہیں پیسوں اور پلاننگ کی کمی ہے۔

انہوں نے میڈیکل کی خواہش رکھنے والے طلبا کو مشورہ دیا کہ وہ کمپیوٹر سائنس اور بائیولوجی کی جانب جائیں کیونکہ آنے والا وقت ان دو شعبوں کا ہے کیونکہ بائیوٹیک کی شکل میں دنیا میں ایک نئی مارکیٹ آئے گی جو باقی سب کی مانگ ختم کر دے گی۔

  • He makes sense when it comes to real stuff ! However he need to keep himself quite when it comes to confrontation politics. All ministers are involved into silly politics of shaming and blaming games. Once in the office and bearing federal ministry then they should just simply work , respect and good names come automatically.


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >