نیب نے خواجہ آصف کی 10 بڑی کمپنیوں میں انویسٹمنٹ، شیئرز کا سراغ لگا لیا

خواجہ آصف کے آمدن سے زائد اثاثے، نیب نے تحقیقاتی رپورٹ جمع کروادی

 

نیب نے لیگی رہنما خواجہ آصف کی دس بڑی کمپنیوں میں انویسٹمنٹ اور شیئرزکا پتا لگا لیا، تحقیقاتی رپورٹ احتساب عدالت میں جمع کروادی گئی،جس میں بتایا گیا کہ نیب نے پرائیویٹ بروکر جے ایس گلوبل سے خواجہ آصف کے شئیرز کی تمام تفصیلات حاصل کیں ۔ رپورٹ کے مطابق خواجہ آصف کے آئی ٹی کی ایک کمپنی میں ایک کروڑ سے زائد کے شئیرز ہیں۔

نیب کی دستاویزات کے مطابق خواجہ آصف کے بے نامی اداروں کے اڑتالیس اکاؤنٹس ہیں، اڑتالیس اکاؤنٹس میں گیارہ کروڑ اکیانوے لاکھ پچاس ہزار روپےجمع ہوئے،بے نامی اداروں کے اکاؤنٹس سے4کروڑ 70 لاکھ روپےکی رقم نکالی بھی گئی، بےنامی طارق میر اینڈ کمپنی میں 2009 سے 18 تک کروڑوں جمع اور نکلوائے گئے۔

خواجہ آصف کے تین نجی بینکوں میں ایک کروڑ سولہ لاکھ سے زائد کے شئیرز ہیں۔سوئی سدرن گیس پائپ لائنز میں مجموعی طور پر 77 لاکھ سے زائد کے شیئرز ان کی ملکیت ہیں ۔خواجہ آصف اینگرو کارپوریشن اور نیشنل ریفائنری لمیٹڈ میں 9 لاکھ 34 ہزار کے شئیرز کے مالک ہیں۔

 

خواجہ آصف کی بےنامی کمپنی میں 50 کروڑ 70 لاکھ روپےکی رقم جمع ہونے کی شواہد ملے ۔ بے نامی کمپنی سے10 سال کے دوران 41 کروڑ 90 لاکھ روپے کی رقم نکالی گئی،دستاویزات کے مطابق خواجہ آصف نے10 سال میں مختلف کمپنیزمیں3 کروڑ 21 لاکھ 68 ہزار 970 شئیرز کی خریدوفروخت کی ہے۔

خواجہ آصف سے مختلف کمپنیوں میں سرمایہ کاری کا ریکارڈ دیکھا پر پوچھ گچھ کی گئی ہے۔ خواجہ آصف سے پوچھا گیا کہ رقم کہاں آئی اور منافع کتنا ملا، نیب نے خواجہ آصف کو بے نامی اداروں کے اکاوَنٹس میں جمع رقوم سے متعلق پوچھا گیا۔ بیرون ملک سے 22 کروڑ کی رقم سے متعلق بھی پوچھ گچھ کی گئی ہے۔ اطلاعات ہیں کہ خواجہ آصف دوران تفتیش سوالوں کے جواب دینے سے قاصر رہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ نجی فارماسیوٹیکل کمپنی میں بھی وہ لاکھوں کے شیئرز کے مالک ہیں ۔ نیب کے مطابق خواجہ آصف نے 2010 سے 2020 کے درمیان انویسٹمنٹ کی اور شئیرز خریدے ۔ خواجہ آصف نے انوسٹمنٹ کے متعلق کوٸی بھی جواب دینے سے انکار کیا ۔ملزم کا جسمانی ریمانڈ انتہاٸی اہم ہے تاکہ اتنی بڑی انوسٹمنٹ کے حوالے سے تفتیش مکمل کی جا سکے۔

نیب نے29دسمبر2020 میں آمدن سے زائد اثاثہ جات کیس میں خواجہ آصف کو گرفتار کیا تھا، خواجہ آصف کو طلب کیا تھا لیکن وہ ثبوت نہ دے سکے،خواجہ آصف کے پاس 2004 سے 2008 تک غیر ملکی اقامہ رہا، انہوں نے بطور کنسلٹنٹ لیگل ایڈوائزر کے 13 کروڑ 60 لاکھ روپے وصول کیے۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >