ندیم افضل چن کا استعفی منظور نہ کیا جائے، وفاقی وزراء کی وزیراعظم سے اپیل

ندیم افضل چن کا استعفی منظور نہ کیا جائے، وفاقی وزراء کی وزیراعظم سے اپیل

تفصیلات کے مطابق وفاقی وزراء کی جانب سے وزیراعظم عمران خان سے درخواست کی گئی ہے کہ ندیم افضل چن کا استعفی منظور نہ کیا جائے، جن وزرا کی جانب سے وزیراعظم سے ندیم افضل چن کا استعفیٰ منظور نہ کرنے کی درخواست کی گئی ہے ان میں فواد چودھری، شیریں مزاری اور علی زیدی شامل ہیں۔

خبر رساں ذرائع کے مطابق وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے پارلیمانی رابطہ کاری ندیم افضل چن کے حکومت کے ساتھ کئی امور پر اختلافات تھے، اس کے علاوہ ندیم افضل چن سانحہ مچھ کے متاثرین کے پاس وزیراعظم کے تاخیر سے جانے کے ناقد تھے۔

اسی سلسلے میں انہوں نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ٹویٹ بھی کیا تھا کہ "اے بے یار ومددگار معصوم مزدوروں کی لاشوں، میں شرمندہ ہوں”

خیال رہے کہ منگل کے روز ہونے والے وفاقی کابینہ کے اجلاس میں وزیراعظم نے واضح کیا تھا کہ جو شخص پارٹی کی پالیسی کے مطابق نہیں چل سکتا یا وفاقی کابینہ میں کیے گئے فیصلوں سے متفق نہیں تو وہ استعفیٰ دے کر میڈیا میں جاکر اپنے اختلافات کا کھل کر اظہار کرسکتا ہے۔

بعد ازاں خبر رساں ادارے نے اپنی رپورٹ میں یہ بھی دعویٰ کیا ہے کہ وزیراعظم عمران خان کو بھی ندیم افضل کی بعض باتوں سے اختلافات تھا جبکہ ندیم افضل چن بھی بحیثیت ترجمان دیگر سیاستدانوں پر تنقید کے حوالے سے کبھی وزیراعظم کی توقعات پر پورا نہیں اترے تھے، جس کی وجہ سے وزیراعظم عمران خان اور ندیم افضل چن کے درمیان تناؤ کی کیفیت پیدا ہو گئی۔

دوسری جانب ندیم افضل چن نے بھی وزیراعظم کو بھجوائے گئے اپنے استعفے کی تصدیق کردی ہے اور انہوں نے اپنے استعفے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ صرف ایک معاون خصوصی کا عہدہ چھوڑ رہے ہیں لیکن پارٹی سے وابستہ رہیں گے اور جب بھی عمران خان کو ان کی ضرورت ہوگی وہ دستیاب ہوں گے۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >