لاہور : مریم نواز کی احتساب عدالت آمد، عدالت کے باہر شدید ہنگامہ آرائی

شہبازشریف خاندان کی منی لانڈرنگ سے متعلق کیس کی سماعت کے موقع پر لیگی کارکنوں نے احتساب عدالت کے باہر شدید ہنگامہ آرائی کی، خواتین کارکنان اور لیگی رہنماؤں کی پولیس سے دھکم پیل اور تلخ کلامی بھی ہوئی۔ صورتحال کو قابو میں لانے کے لیے پولیس کی مزید نفری اور واٹرکینن بھی منگوالیا گیا ہے۔

لاہور کی احتساب عدالت میں شہبازشریف خاندان کی منی لانڈرنگ سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی، اس موقع پر مریم نواز شہباز شریف اور حمزہ شہباز سے ملنے عدالت پہنچیں تو لیگی کارکنان نے احتساب عدالت کے باہر شدید ہنگامہ آرائی کی ، لیگی خواتین نے پولیس کودھکے دیئے اور آگے جانے کی کوشش کی۔

پولیس اور لیگی کارکنان میں پہلے تلخ کلامی ہوئی جو بعد ازاں شدید دھکم پیل میں بدل گئی اور پولیس کی مزید نفری طلب کرنا پڑی، لیگی رہنما خواجہ عمران نذیر اور چوہدری شہباز نے بھی پولیس اہلکاروں کو دھکے دیئے اور گالم گلوچ کی۔

ایم ایس ایف کے مقامی عہدیدار اور طلبا بھی احتساب عدالت پہنچ گئے، عدالت کے باہر واٹرکینن منگوا لیا گیا جبکہ خواتین پولیس اہلکار بھی طلب کر لی گئیں ہیں۔

جب مریم نواز نے شہبازشریف اورحمزہ شہبازسےملاقات کی تو دونوں نے کمرہ عدالت میں کرسیوں سےاٹھ کرمریم نواز کا استقبال کیا، مریم نواز نے شہباز شریف سے طبیعت دریافت کی اور مختلف امور پر گفتگو کی۔

لاہور میں نیب عدالت کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مریم نواز نے کہا کہ عمران خان شہباز شریف سے خطرہ محسوس کرتے ہیں اسی لیے انہیں اور حمزہ شہباز کو سیاسی انتقام کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ حکومت شہباز شریف اور حمزہ شہباز کو انتخابات سے دور رکھنا چاہتی ہے۔

ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ وہ پی ڈی ایم کے الیکشن کمیشن کے باہر احتجاج میں شرکت نہ کرنے سے متعلق پیپلزپارٹی کے فیصلے سے آگاہ نہیں ہیں۔

یاد رہے کہ پی ڈی ایم کی جانب سے 19 جنوری کو الیکشن کمیشن آف پاکستان کے باہر احتجاج کرنے کا اعلان کیا گیا تھا۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >