جھوٹے مقدمے میں سزا کاٹنے والی 80 سالہ ضعیف خاتون 7 سال بعد بری

میڈیا رپورٹس کے مطابق کوئٹہ سے تعلق رکھنے والی 80 سالہ ضعیف العمر خاتون جو بغیر کسی جرم کے سات سال تک قید کی سزا کاٹتی رہی، تاہم سزا ختم ہونے سے کچھ روزقبل عدالت نہیں ناکافی ثبوتوں کی بنیاد پر خاتون کو بری کردیا۔

خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق کوئٹہ کی رہائشی 80 سالہ سکینہ رمضان گھریلو ملازمہ تھی جنہوں نے 2014 میں اپنے مالک کے کہنے پر الیکٹرونکس کا سامان لے کر کراچی پہنچ گئی تھی جہاں پر کسٹم اہلکاروں نے سامان کی تلاشی کے دوران چرس برآمد کی تھی، جس پر شاید ان کو گرفتار کر لیا گیا تھا۔

بعد ازاں انسداد منشیات عدالت نے 80 سالہ خاتون کو عمر قید کی سزا سناتے ہوئے دس لاکھ روپے جرمانہ بھی ادا کرنے کا حکم دیدیا، لیکن اب سات سال گزرنے کے بعد عدالت نے ضعیف خاتون سکینہ رمضان کو ناکافی ثبوتوں کی بنیاد پر رہا کرنے کا حکم دے دیا ہے، جب کہ بے گناہ خاتون سات سال تک ایسے جرم کی سزا کاٹتی رہی جو اس نے کبھی کیا ہی نہیں۔

مذکورہ واقعہ کے حوالے سے ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل پنجاب فیصل چوہدری کا نجی ٹی وی کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ انصاف فراہم کرنا صرف عدالت کا ہی کام نہیں ہوتا بلکہ اس میں تین حصے ہوتے ہیں جو مل کر انصاف کی فراہمی کو ممکن بناتے ہیں، انصاف فراہمی کے عمل میں سب سے پہلے تفتیش پھر پراسیکیوشن اور اس کے بعد عدالت کا فیصلہ آتا ہے۔

خیال رہے کہ بے گناہی کے باوجود سالوں تک جیل میں سزا کاٹنے کی بدترین مثال کراچی کی اسماء نواب کا کیس ہے، جس نے بیس سال تک اپنے گھر والوں کے قتل کے جرم میں جیل میں سزا کاٹی، لیکن بیس سال بعد بھی اس بات کا تعین نہیں کیا جا سکا کہ وہ اس جرم میں ملوث ہیں یا نہیں، لیکن اسماء نواب کو ٹرائل کورٹ نے موت کی سزا سنا رکھی تھی۔

بعد ازاں عدالت میں ٹرائل کورٹ کی فیصلے کے خلاف اپیل دائر کی گئی جن ثبوتوں کی بنیاد پر اسماء نواب کو ٹرائل کورٹ نے سزائے موت کی سزا سنائی ہے وہ ثبوت ہی غیر موثر ہیں، جس پر عدالت نے ثبوتوں کو غیر موثر قرار دیتے ہوئے اسما نواب کو بیس سال بعد باعزت بری کرنے کا حکم دے دیا۔

  • اور مریم ایک کنفرم مجرم، سزا یافتہ آزاد گھوم رہی ہے، نا صرف آزاد ہے بلکہ جلسے کر رہی ہے اور پی ایم کو گالیاں دے رہی ہے۔

  • باعزت والی کون سی بات ہے۔ کیا بیس سال زندگی خراب کرنے کا حکومت نے معاوضہ دیا جو اسکی باعزتگی کا ثبوت ہوا۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >