کراچی میں مالکن کو قتل کرنیوالی ملازمہ پولیس موبائل سے کود کر فرار

 کراچی میں مالکن کو قتل کرنیوالی ملازمہ پولیس موبائل سے کود کر فرار

کراچی میں قاتل ملازمہ شاطر نکلی، پولیس موبائل سے چھلانگ لگاکر فرار ہونے میں کامیاب ہوگئی،ملازمہ نے سچل کے علاقے میں مالکن کو نشہ آور گولیاں کھلاکر قتل کیا تھا جس پر پولیس نے ملازمہ کو گرفتار کرلیا تھا،لیکن ملازمہ نے موقع دیکھ کر فرار ہونے کا منصوبہ کامیاب بنالیا۔

پولیس کے مطابق تینوں ماسیوں کو گزری پولیس نے گرفتار کیا تھا، اسپتال سے واپسی پر جامع کلاتھ کے قریب شمیم رانی نامی ملزمہ موبائل سے چھلانگ لگاکر فرار ہوگئی،سچل کے علاقے میں گھروں میں کام کاج کے دوران مالکن کو نشہ آور گولیاں کھلا کر قتل کرنے والی 3 ماسیوں کا ملیر کورٹ سے ریمانڈ لینے کے بعد کورونا ٹیسٹ کے لیے سول اسپتال منتقل کیا گیاتھا۔

پولیس کا کہنا ہےکہ واقعے کا مقدمہ آرام باغ تھانے میں سرکاری مدعیت میں درج کیا گیا،جس میں فرار ہونے والی ملزمہ سمیت تفتیشی افسر سب انسپکٹر سردار عمرانی،علی اکبر اورلیڈی پولیس اہلکار مریم کو بھی نامزد کیا گیا ہے۔

دوسری جانب پولیس کے مطابق ڈیفنس کے علاقے توحید کمرشل میں گھر میں کام کرنے والی 2 ملازمائیں گھر سے 20 لاکھ روپے چوری کرکے لے گئیں،مالک نے رقم غائب دیکھی تو ملازمہ مہناز اور فرزانہ سے پوچھ گچھ کی جس پر دونوں نے بتایا کہ انہوں نے ساتھی ظفر کے ہمراہ چوری کی ہے۔

گھر کے مالک نے پولیس کو اطلاع دی جس پر پولیس نے 13 لاکھ روپے کی رقم برآمد کرلی لیکن باقی رقم ظفر لے کر فرار ہوگیا۔

گزشتہ ماہ گلبرگ میں گھریلو ملازمہ نے چوری کے دوران پکڑے جانے پر گھر کی مالکن کو قتل کر دیا تھا، ایس ایس پی سینٹرل ملک مرتضیٰ کے مطابق گلبرگ بلاک 5 میں علی الصبح ملازمہ نے گھر میں چوری کی واردات کرنے کی کوشش کی لیکن اس دوران 85 سالہ نور نے ملازمہ کو دوران واردات پکڑ لیا۔

ملازمہ نے مالکن کا گلا گھونٹ دیا جس سے اس کی موت ہوگئی،واردات میں ملوث ملازمہ عارفہ اور اس کے شوہر الن کو گرفتار کر لیا تھا۔


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>