پی ڈی ایم کی گزشتہ روز ریلی ناکام؟ کتنے افراد شریک تھے؟

پی ڈی ایم سربراہ مولانا فضل الرحمان کی جانب سے الیکشن کمیشن کے باہر احتجاج کی کال پر اپوزیشن جماعتیں پہنچیں تو سہی مگر مسلم لیگ (ن) سمیت دیگر اپوزیشن جماعتیں بڑی تعداد میں اپنے کارکنان کو سڑکوں پر لانے میں ناکام دکھائی دیں۔

جڑواں شہروں سے تعلق رکھنے والی لیگی قیادت عوام درکنار اپنے کارکنان کو بھی باہر نہ نکال سکی۔ مسلم لیگ ن نے الیکشن کمیشن کے باہر احتجاج کے لیے شمس آباد پبلک پارک کا مقام مختص کر رکھا تھا جب کہ جے یو آئی (ف) کی قیادت نے اپنے کارکنوں کو لیاقت باغ میں جمع ہونے کا حکم دیا تھا، مگر پیپلزپارٹی نے اس حوالے سے کوئی مقام مختص کیا نہ ہی کارکنوں کو احتجاج میں شرکت کے لیے کوئی ہدایت دی۔

مسلم لیگ (ن) کے مختص کردہ مقام راولپنڈی کے شمس آباد پبلک پارک کے باہر احتجاجی ریلی قیادت مریم نواز نے کی جن کے ساتھ مریم اورنگزیب، رانا ثنا اللہ، مصدق ملک نے کرنا تھا جہاں سے اس احتجاجی ریلی کو سرینا چوک پہنچ کر مرکزی ریلی کا حصہ بننا تھا مگر مقامی قیادت جن میں سابق میئر سردار نسیم و دیگر ارکان شامل ہیں وہ اپنے کارکنان کو لانے میں ناکام دکھائی دیئے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق لیگی قیادت پی ڈی ایم کی احتجاجی ریلی میں شرکت کے لیے جب پہنچی تو ان کے ہمراہ بمشکل پندرہ سو کارکنان بھی نہ تھے جبکہ اتنی بڑی تعداد میں لیگی رہنماؤں کی موجودگی میں کارکنوں کی تعداد اس سے کئی گنا زیادہ تصور کی جا رہی تھی۔

صدیق جان نے کنٹرول روم سے پی ڈی ایم کے لائیو مناظر دکھائے جس کے مطابق عوام کی بہت کم تعداد ریلی میں شریک ہوئی۔ جب وہ ریلی کی کوریج کیلئے آئے تو سڑکوں پر رش نظر نہیں آرہا تھا۔ تمام سڑکیں کھلی ہوئی تھیں۔ یہاں تک میٹروبس سروس جو ایسے حالات میں بندکردی جاتی ہے وہ بھی چل رہی تھی۔

شیخ رشید نے چیلنج کرتے ہوئے کہا کہ ریلی میں 2000 لوگ شریک تھے۔ جو میرا اندازہ تھا اس سے بہت کم لوگ اکٹھے ہوئے ہیں۔

صدیق جان کے مطابق پی ڈی ایم کا شو فلاپ تھا جس کی بڑی وجہ یہ تھی کہ راولپنڈی سے حنیف عباسی ہی بندے نکال کر لاتے تھے لیکن اب وہ منظرعام سے غائب ہیں جس کے بعد ن لیگ میں کوئی ایسی شخصیت نہیں جو لوگوں کو باہر نکال سکے۔

  • بد بودار فضلہ۔ فضل الشیطان نطفہ حرام پاکستان کی فوج بھونکنے والا مودی کا خنزیری نسل کا پالتو کتا اسلام فروش منافق کا ملُک مخالف فوج مخالف انڈین ایجنڈا وڑ گیا اس مودی کے پالتو کتے کے پچھواڑے میں


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >