"ڈی ایچ اے مافیا کلب” کے ارکان گاڑی سمیت پولیس کے ہتھے چڑھ گئے

"ڈی ایچ اے مافیا کلب" کے ارکان  گاڑی سمیت پولیس کے ہتھے چڑھ گئے

کراچی کی سڑکوں پر دوڑنے والی ایک گاڑی جس کی نمبر پلیٹ کی جگہ”ڈی ایچ اے مافیا کلب” کی ایک پلیٹ آویزاں تھی، پولیس نے اس گاڑی کو پکڑ کر اس پر سوار افراد کو حراست میں لے لیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز سوشل میڈیا پر چند تصاویر اور ویڈیوز وائرل ہوئیں جس میں کراچی کی شاہراہوں پر گشت کرتی ایک بڑی گاڑی دکھائی دے رہی تھی جس کے پچھلے حصے میں گارڈ نما مسلح افراد سوار تھے۔

اچھنبے کی بات نہ اس گاڑی میں تھی نہ ہی سوار گارڈز میں، بلکہ اس گاڑی کی نمبر پلیٹ والی جگہ پر لگائی گئی ایک فینسی پلیٹ تھی جس پر” ڈی ایچ اے مافیا کلب” درج تھا۔

گاڑی کے پیچھے اپنی گاڑی میں سفر کرنے والےکراچی کے کسی شہری نے اس گاڑی کی نہ صرف ویڈیو اور تصاویر بنائیں بلکہ اسے سوشل میڈیا پر اپلوڈ بھی کردیا جو بہت تیزی سے وائرل ہوگئیں۔

ویڈیوز کے وائرل ہوتے ہی ایس ایس پی کلفٹن نے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے فوری طور پر گاڑی کو پکڑنے کے احکامات جاری کردیے،پولیس نے بھی احکامات ملتے ہی وائرلیس پر اس گاڑی سے متعلق تفصیلات پورے شہر میں پولیس کو فراہم کردیں۔

پولیس کی جانب سے جاری کردہ تفصیلات کے مطابق رات ساڑھے 10 بجے کے قریب اس گاڑی کو کراچی میں 2 تلوار کے پاس دیکھا گیا، پولیس ناکے پر تعینات اہلکاروں نے گاڑی کو روکا، اور مسلح افراد سے اسلحہ کے کاغذات طلب کیے جو وہ فراہم نہ کرسکے۔

"ڈی ایچ اے مافیا کلب" کے ارکان  گاڑی سمیت پولیس کے ہتھے چڑھ گئے

پولیس کے مطابق گاڑی میں سوا ر افرا د نے قابل قبول دستاویزات فراہم نہیں کی جس پر تمام افراد کو گاڑی سمیت کلفٹن تھانے منتقل کردیا گیا جہاں ان کے خلاف مزید کارروائی کا آغاز کیا گیا۔

"ڈی ایچ اے مافیا کلب" کے ارکان  گاڑی سمیت پولیس کے ہتھے چڑھ گئے

"ڈی ایچ اے مافیا کلب" کے ارکان  گاڑی سمیت پولیس کے ہتھے چڑھ گئے

دوسری جانب ڈیفنس ہاؤسنگ اتھارٹی(ڈی ایچ اے) کی جانب سے جاری کردہ ایک وضاحتی بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ چند لڑکوں کا ایک گروہ ہے جو ڈیفنس کے علاقے میں گاڑیوں کی ریس لگاتے ہیں، ان کا کسی قسم کا تعلق ڈی ایچ اے سے نہیں ہے۔

ڈی ایچ نے اپنے بیان میں شہریوں سے اپیل کی کہ وہ ذاتی معاملات سے ڈی ایچ اے کو نہ جوڑا کریں۔

"ڈی ایچ اے مافیا کلب" کے ارکان  گاڑی سمیت پولیس کے ہتھے چڑھ گئے


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >