ایل این جی ٹینڈر ڈیفالٹ پاکستان کیلئے رحمت، ایل این جی کارگو سستا خرید لیا

 

عالمی منڈی میں ٹینڈر ڈیفالٹ سے پاکستان نے بھرپور فائدہ اٹھایا، پہلے سے22 فیصد سستا کارگو خریدا گیا، پٹرولیم ڈویژن

دو غیر ملکی سرکاری کمپنیوں (ای این او سی اور ایس او سی اے آر) کی جانب سے پاکستان کیلئے گزشتہ ہفتے ایل این جی سپلائی ڈیفالٹ ہونا پاکستان فائدہ مند ثابت ہوا جس کی وجہ سے ایل این جی کے 2 فوری متبادل ٹینڈرز عالمی منڈی میں قیمتیں کم ہونے کے باعث 16 سے 18 فیصد کم قیمت پر پاکستان کو مل گئے۔

ترجمان پٹرولیم ڈویژن کے مطابق پاکستان ایل این جی لمیٹڈ (پی ایل ایل) نے ارجنٹ بڈز کے ذریعے فروری کے آخری ہفتے میں سپلائی یقینی بنا کر ایل این جی سپاٹ کارگو خرید لیا ہے، متحدہ عرب امارات کی کمپنی سے معذرت کے بعد یہ کارگو قطر پٹرولیم سے خریدا گیا ہے یہ ایل این جی کارگو پہلے کارگو سے 22فیصد سستا خریدا گیا ہے۔

پٹرولیم ڈویژن کے ترجمان نے کہا کہ قطر پٹرولیم 16.3فیصد برینٹ کی بنیاد پر ایل این جی فراہم کرے گی اس سے قبل منسوخ ہونے والے کارگو سے ایل این جی 20.84 فیصد برینٹ پر ملنی تھی، کارگو ڈیلیوری ونڈو 49 دنوں کی تھی جبکہ نیا کارگو 35 دنوں میں ترسیل ہو گا۔

ترجمان کے مطابق اس کارگو کو ملا کر کل 9 ایل این جی کارگوز فروری کے لیے دستیاب ہونگے۔ دراصل پی ایل ایل اور ایس او سی اے آر آخری لمحے تک بات چیت میں مشغول رہے تاہم جی ٹو جی ڈیل کے لیے کابینہ کی منظوری کی ضرورت نے اس عمل کو ختم کردیا۔

پٹرولیم ڈویژن کی جانب سے سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کا دعویٰ بھی غلط ثابت کر دیا گیا جس میں انہوں نے کہا تھا کہ حکومت نے 3 سے 5 گنا مہنگی ایل این جی خریدنی چاہی جو انہیں پھر بھی نہ ملی۔ انہوں نے حکومت کی توانائی پالیسی پر کڑی تنقید کرتے ہوئے گزشتہ روز کہا تھا کہ صنعتوں اور گھریلو صارفین کو گیس کی فراہمی نہیں کی جا رہی اور کئی کئی گھنٹے کی گیس کی لوڈشیڈنگ جاری ہے۔

  • جنکی نیت صاف ہو اللہ تعالیٰ انکی مدد فرماتا ہے۔۔
    اور اپوزیشن کے نصیب میں ہمیشہ کے لیے ذلالت اور ہزیمت لکھ دی گئی ہے

    • نیت صاف اور بوٹ صاف میں بھی فرق ہونا چاھیے ۔ ایک انتہائ قسم کی نا اھلیت کا نیت صاف کے جملے سے دفاع نہیں کیا جاسکتا ۔ ہمیشہ نااھلیت رحمت میں نہیں بدل سکتی ۔ میں دعوے سے کہتا ہوں کہ بنی غالہ میں اپنی اعلی حکمت عملی کے نتیجے میں ملنے والی کامیابی پر جشن منا جارہا ہوگا لیکن احمق اس نااھلیت اور کام چوری کی تحقیقات کبھی نہیں کروائیں گے ۔ یہ حکومت تکے پر چل رہی ہے ۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >