کھوکھر برادران کے خلاف گرینڈ آپریشن کے مناظر

قبضہ مافیا کھوکھر برادران کیخلاف ایکشن،38کنال زمین واگزار

لاہور انتظامیہ کی بڑی کارروائی سامنے آگئی، بدنام زمانہ قبضہ گروپ کھوکھر برادران کے خلاف گرینڈ آپریشن کیا،لاہور میں لیگی رہنما سیف الملوک کھرکھر کے بھانجوں اور بھتیجوں کے گھر مسمار کر دیئے گئے ہیں،ایل ڈی اے کے آپریشن کے دوران پولیس نےپورےعلاقے کو گھیرے میں لیا تھا۔

ایل ڈی اے کا کہنا ہے کہ نواب ٹاؤن کھوکھر پیلس کے اطراف تجاوزات کیخلاف آپریشن کیا گیا،انتظامیہ نے اڑتیس کنال سرکاری زمین کھوکھر برادران سے واگزار کروار کر پنجاب حکومت کے حوالے کردی ہے، جس کی مالیت سوا ارب روپے کے قریب ہے۔

 

انتظامیہ نے بھاری مشینری کی مدد سے آپریشن شروع کیا،ایوب چوک سے کھوکھرپیلس جانےوالا راستہ بندکردیاگیا،کھوکھرپیلس کاعقبی دروازہ،دیوارمسمارکردی گئی، پولیس نےتمام راستوں کو کنٹینرز اور بیریئرز لگا کر بند کردیا کسی بھی شخص کو اندر جانے کی اجازت نہیں۔

انتظامیہ کا کہنا ہے کہ کھوکھربرادران نےجعلسازی سےزمین پرقبضہ کیاتھا،زمین کو چھوڑنے کے نوٹس بھی جاری کیےگئے تھے،نوٹس پر عملدرآمد نہ کرنے پر آج آپریشن کیا گیا۔

اس سے قبل بھی کھوکھر برادران کیخلاف کارروائیاں کی جاچکی ہیں،گزشتہ ماہ مسلم لیگ ن کے رکن پنجاب اسمبلی سیف الملوک کھوکھر سے 80 کنال اراضی واگزار کراوائی گئی تھی،اینٹی کرپشن پنجاب کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا تھا کہ ضلعی انتظامیہ لاہور اور اینٹی کرپشن پنجاب نے قبضہ مافیا کے خلاف کارروائی کرتے ہوئے ن لیگ کے ایم پی اے سیف الملوک کھوکھر سے 80 کنال اراضی واگزار کروائی ہے۔

حکام اینٹی کرپشن پنجاب کا کہنا تھا کہ واگزار کرائی جانے والی زمین کی مالیت اربوں روپے ہے، رائیونڈ روڈ پر واگزار کرائی گئی اراضی نزول لینڈ قرار دےکر مفاد عامہ کے لیے استعمال ہو گی،ڈی سی لاہور کی درخواست پر لینڈ مافیا کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا تھا، مقدمہ سیف الملوک کھوکھر کے فرنٹ مینوں کے خلاف درج کیا گیا تھا۔

ڈی سی لاہور کا کہنا تھا کہ سیف الملوک کھوکھر نے مبین داؤد، مبشر اور افضل خان کی مدد سے اراضی پر قبضہ کر رکھا تھا، مذکورہ اراضی پارسی خاندان عیدل ڈینشا جی کی ملکیت تھی، ڈینشاجی کی وفات کے بعد اولاد نہ ہونے کی وجہ سے پراپرٹی لاوارث ہو گئی تھی،ملک سیف الملوک کے فرنٹ مینوں نے ملی بھگت سے جائیداد اپنے نام ٹرانسفر کرا لی تھی۔

جبکہ اینٹی کرپشن پنجاب نے مسلم لیگ کے رہنماؤں ایم این اے ملک افضل کھوکھر اور ایم پی اے سیف الملوک کھوکھرکے خلاف ڈی سی شیخوپورہ کی رپورٹ پر درج کیے جانے والے مقدمے میں الزام عائد کیا گیا تھا کہ دونوں لیگی رہنماؤں نے نائب تحصیلدارچوہدری فیروز دین، گرد اور راؤ عاشق اور پٹواری منشی نوشیر علی سمیت دیگر کی ملی بھگت سے 1025 کنال 7 مرلہ سرکاری اراضی اپنے نام ٹرانسفرکرائی تھی۔

مقدمے میں عائد کیے جانے والے الزام کے مطابق یہ اراضی سال 2003 میں دونوں لیگی رہنماؤں کے نام ٹرانسفر کی گئی تھی، دونوں نے سرکاری اراضی کے بدلے دوسری جگہ زمین دینی تھی، انتقال شدہ سرکاری اراضی کے بدلے میں دوسری زمین سرے سے موجود ہی نہ تھی،اینٹی کرپشن حکام کا کہنا تھا کہ اراضی جعلی مالکان سے واگزار کرالی گئی ہے۔

  • آج چھوٹی تھی ورنہ لوہار کوٹ سے سپیشل آحکامات آ جانے تھے کہ بعزت لوگوں کو تنگ نہ کیا جائےاور کھوکروں کو سٹے مل جانے تھے

    • Please tell me one thing. When was the last time Punjab govt challenged any decision of LHC in supreme Court of Pakistan? What stops Punjab govt from doing that? Remember, present Supreme Court is not against PTI government. Justice Faez Essa alone cannot do anything because he is not CJP.

  • This is Naya Pakistan….This is Rule of Law….the law must guarantee that no individual nor group of individuals be privileged or discriminated against by the government.
    Equality, Fairness and Justice should be the pillar of our legal system.

  • نونی لیگ مافیاز کے رائے ونڈ کا نمبر کب آئے گا جس پر غریب عوام کو ڈرا دھمکا کر نونی مافیاز نے جعلی طریقوں سے قبضہ کیا ہؤا رائے ونڈ کی زمینوں کی مالک غریب عوام بھی انصاف کا انتظار کر رہی ھے


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >