وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کے اجلاس کی اندرونی کہانی

وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کے اجلاس کی اندرونی کہانی۔۔ ایف 9 پارک گروی رکھنے کی سمری مسترد۔۔ براڈشیٹ کمیشن کی تحقیقات جسٹس (ر)عظمت سعید کریں گے

فاقی کابینہ نے براڈ شیٹ تحقیقات کیلئے انکوائری کمیشن تشکیل دینے کی منظوری دیدی ہے جس کے سربراہ جسٹس (ر) عظمت سعید ہونگے۔

براڈشیٹ کمیشن صرف جسٹس (ر) عظمت سعید پر مشتمل ہوگا اور کمیشن آف انکوائری ایکٹ 2017 کے تحت تشکیل دیا جائیگا۔ کمیشن نہ صرف براڈ شیٹ کے معاملے کی جامع تحقیقات کریگا بلکہ حدیبیہ پیپر ملز اور سرے محل کی بھی انکوائری کریگا۔

وفاقی کابینہ نے قرض لینے کیلئے بطور ضمانت ایف نائن پارک کی بجائے اسلام آباد کلب کو گروی رکھنے کی منظوری دیدی۔ ایف 9 پارک گروی رکھنے کی کابینہ نے متفقہ طور پر مخالفت کردی۔

وزیراعظم نے ایف 9 پارک کو گروی رکھ کر قرض کے حصول کی تجویز مسترد کر دی اور کابینہ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ قرض کیلئےقومی املاک گروی نہیں رکھی جائیں گی۔

وزیراعظم عمران خان نے اجلاس کے آغاز میں سیکرٹری خزانہ سے استفسار کیا عوام کیلئےبنایاگیاایف9پارک گروی رکھنےکی تجویز کیوں آئی؟

جس پر سیکرٹری فنانس نے سکوک بانڈز پر بریفنگ دیتے ہوئے بتایا یہ اسلامی بانڈ ہے، ماضی کی غلطیاں درست کرنے کیلئے ان بانڈز کا اجراء کرنے کا سوچا، یہ گروی رکھنا صرف علامتی ہے ، عملی طور پر اس سے فرق نہیں پڑتا، سکوک بانڈز کیلئے زمین کی ویلیو بھی دیکھنا پڑتی ہے۔

جس پر وزیراعظم عمران خان نے جواب دیا کہ مجھے پتا ہے کہ سکوک بانڈ کیا ہوتا ہے، عوام کے استعمال میں پارک علامتی طور پر بھی گروی نہیں ہونا چاہیے، اس سے غلط تاثر گیا، اگر یہ عملی طور پر گروی رکھنا نہیں ہوتا تو وزیراعظم ہاوس کو گروی رکھ دیتے، عوام کیلئے بنایا گیا پارک گروی نہ رکھا جائے۔

جس پر ایک وفاقی وزیر نے طنزاً کہا کہ اگر علامتی ہی تھا تو پھر صدر ہاؤس رکھوا دیتے۔

اجلاس سے خطاب میں وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ کرپشن پر کسی قسم کا سمجھوتہ نہیں ہوگا۔ کرپشن کرنے والوں کو بے نقاب کیا جائے گا۔ براڈ شیٹ کے معاملے کسی کو نہیں چھوڑوںگا، یہ معاملہ بہت حساس ہے، اس کی مکمل انکوائری ہوگی۔

علاوہ ازیں کابینہ کے کووڈ ویکسین کی قیمت کے تعین کا اختیار وزارت صحت کو دیدیا جبکہ کابینہ میں نیشنل ڈیزاسٹر منیجمنٹ فنڈ کی رقم میں بے قاعدگیوں کا بھی انکشاف ہوا ہے ۔فنڈ کی مالیت 500 ملین ڈالر بتائی جارہی ہے۔

وزیراعظم عمران خان کو بریفنگ دیتے ہوئے ملک امین اسلم نے کہا کہ آڈٹ میں پتہ چلا کہ 40 لوگوں کی مراعات پورے وزارتی اخراجات کے برابر تھیں۔ وزیراعظم نے فنڈ آڈٹ کرنے پر ٹیم کو سراہا


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>