پنجاب حکومت کا ڈسکہ میں فائرنگ سے جاں بحق پارٹی کارکن کے ورثا کیلئے امداد کا اعلان

پنجاب حکومت کا ڈسکہ میں دوران پولنگ فائرنگ سے جاں بحق پارٹی کارکن کے ورثا کیلئے امداد کا اعلان

وزیراعلیٰ پنجاب کی معاون خصوصی برائے اطلاعات فردوس عاشق اعوان نے ڈسکہ میں ضمنی انتخابات کے روز پولنگ کے دوران فائرنگ سے جاں بحق ہونے والے تحریک انصاف کے کارکن کے ورثا کیلئے پنجاب حکومت کی جانب سے10 لاکھ روپے کی مالی امداد کا اعلان کیا۔

وفاقی وزیر شبلی فراز، فواد چودھری اور ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے این اے 75 ڈسکہ میں دوران پولنگ قتل ہونے والے پی ٹی آئی کے کارکن کے گھر جا کر اہلخانہ سے تعزیت کی۔انہوں نے اس موقع پر حکومت پنجاب کی جانب سے مقتول کے اہلخانہ کو 10 لاکھ روپے مالی امداد اور سرکاری نوکری دینے کا اعلان بھی کیا۔

یاد رہے کہ این اے 75 ڈسکہ میں 19 فروری کو ہونے والے ضمنی انتخاب میں گوئیندے والا پولنگ اسٹیشن پر (ن) لیگ اور پی ٹی آئی کے کارکنان کے مابین تصادم ہوا تھا اور فائرنگ کے تبادلے میں تحریک انصاف کا کارکن ماجد مہر جاں بحق ہوا تھا۔

اس فائرنگ کے نتیجے میں مسلم لیگ(ن) کا بھی ایک ذیشان نامی کارکن جاں بحق ہوا تھا۔ اس واقعہ کی سامنے آنے والی فوٹیج میں دیکھا جا سکتا ہے کہ کس طرح لیگی کارکن جاوید بٹ اور حمزہ بٹ سرعام فائرنگ کرتے ہیں جس کے نتیجے میں 2 افراد جاں بحق اور متعدد زخمی ہوئے۔

اس واقعے سے متعلق این اے75 ڈسکہ میں تحریک انصاف کی انتخابی مہم چلانے والے عثمان ڈار کا کہنا ہے کہ رانا ثنا اللہ مسلح افراد کے ساتھ اس حلقے میں آئے ان کا مقصد یہاں پر دوبارہ ماڈل ٹاؤن جیسا سانحہ دہرانا تھا کیونکہ وہ پرُامن الیکشن کے عمل کو سبوتاژ کرنا چاہتے تھے۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >