پی ٹی آئی رہنما لیاقت جتوئی کو متنازعہ بیان پر اظہار وجوہ کا نوٹس جاری،وضاحت طلب

پی ٹی آئی رہنما لیاقت جتوئی کو متنازعہ بیان پر اظہار وجوہ کا نوٹس جاری،وضاحت طلب

پاکستان تحریک انصاف کی قائمہ کمیٹی برائے نظم و احتساب نے 35 کروڑ میں سینیٹ سیٹ بیچنے کے متنازعہ بیان پر پی ٹی آئی کے رہنما لیاقت جتوئی کو اظہار وجوہ کا نوٹس جاری کر دیا ہے، پی ٹی آئی رہنما سے ان کے متنازعہ بیان پر سات روز میں وضاحت طلب کی گئی ہے۔

پی ٹی آئی کی قائمہ کمیٹی برائے نظم و احتساب کی جانب سے بھیجے گئے اظہار وجوہ کے نوٹس میں کہا گیا ہے کہ لیاقت جتوئی نے پارٹی قیادت کےخلاف گفتگو اور سنگین الزام تراشی کی ہے، لہذا آپ کا طرز عمل جماعتی پالیسی اور آئین کی خلاف ورزی ہے۔

پی ٹی آئی کے رہنما لیاقت جتوئی کی جانب سے پی ٹی آئی کے امیدوار سیف اللہ ابڑو پر 35 کروڑ کے عوض سینیٹ سیٹ کا ٹکٹ خریدنے کے الزام پر پی ٹی آئی کی قائمہ کمیٹی برائے نظم و احتساب نے اپنے اظہار وجوہ کے نوٹس میں کہا ہے کہ  قائمہ کمیٹی سات روز کے اندر معاملے پر کارروائی کرے گی۔

یاد رہے کہ  پی ٹی آئی کے رہنماؤں کے درمیان محاذ آرائی گزشتہ روز اس وقت شروع ہوئی جب پی ٹی آئی کے رہنما نے اپنی ہی پارٹی کے امیدوار سیف اللہ ابڑو پر سینٹ کا ٹکٹ خریدنے کرنے کا الزام لگا دیا تھا۔

بعد ازاں پی ٹی آئی کے سینیٹ کے امیدوار سیف اللہ ابڑو نے لیاقت جتوئی کی جانب سے لگائے گئے الزامات پر خاموشی توڑتے ہوئے لیاقت علی جتوئی کے خلاف قانونی چارہ جوئی کرنے کا اعلان کر دیا اور کہا ہے کہ لیاقت جتوئی نے مجھ پر سنگین نوعیت کے بے بنیاد الزامات عائد کیے ہیں۔

سیف اللہ ابڑو کا اپنے جوابی ردعمل میں لیاقت جتوئی پر الزام عائد کرتے ہوئے کہنا تھا کہ آپ لوگ کتنے دنوں سے میرے خلاف لابنگ کر رہے ہیں، لہذا آج میں آپ کو قانونی نوٹس بھجوا رہا ہوں اور اب ملاقات صرف عدالت میں ہی ہوگی، جہاں آپ کو مجھ پر لگائے گئے الزامات ثابت کرنا ہوں گے۔


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>