‘اسپیکر پنجاب اسمبلی چودھری پرویز الہٰی پنجاب حکومت پر برہم ‘میرا منہ نہ کھلوائیں

اسپیکر پنجاب اسمبلی چودھری پرویز الہٰی پنجاب حکومت پر برہم، وزیر قانون راجہ بشارت سے سیدھی باتیں

نجی ٹی وی چینل کے مطابق پنجاب اسمبلی کے اجلاس میں اسپیکر چودھری پرویز الہٰی اور صوبائی وزیرقانون راجہ بشارت میں واشگاف الفاظ میں تکرار ہوئی۔ اسپیکر پنجاب اسمبلی نے ایمرجنسی سروسز بل ایوان میں پیش نہ کئے جانے پر احتجاجاً اسمبلی کا اجلاس بغیر کارروائی کے یکم مارچ تک ملتوی کردیا۔

چودھری پرویزالہٰی کا کہنا تھا اسمبلی کے اندرکئے جانے والے وعدے پرعمل کروانا میرے فرائض میں شامل ہے،اس بارے میں غفلت نہیں برتی جا سکتی۔اگر ہم اس ہاؤس کی عزت میں اضافہ نہیں کریں گے تو آخر کار نقصان سب کا ہے۔ ہم رکاوٹیں ڈالنے والوں کو برداشت کر رہے ہیں۔ مجھے پتہ ہے کہاں سے مخالفت ہو رہی ہے۔

اسپیکر پنجاب اسمبلی نے کہا مجھے بیوروکریسی کے پیچھے چھپے ہوئے ان لوگوں کا بھی علم ہے لیکن لحاظ کر رہا ہوں، نا سمجھ لوگوں کو معلوم نہیں کہ اگر پردہ ختم ہو گیا تو پارلیمنٹ کی لڑائی کہاں تک جائے گی۔

راجہ بشارت نے جواب دیا کہ آپ ریسکیو کے ڈی جی کو تاحیات تعینات کرنا چاہتے ہیں تو کر دیں تاہم کسی فرد واحد کے لیے آئینی و قانونی تقاضے بالائے طاق نہیں رکھے جا سکتے۔ پارلیمانی تاریخ میں فرد واحد کے لیے قانون سازی کی ایسی کوئی نظیر نہیں ملتی۔
صوبائی وزیر نے یہ بھی کہا کہ پنجاب ایمرجنسی کونسل کے بل میں ترامیم کے تناظر میں یہ منی بل ہے جسے پیش کرنے کے لیے کابینہ کی منظوری لازم ہے جبکہ ریسکیو 1122 سے متعلق ایکٹ میں ترمیمی بل پرائیویٹ ممبر کے بل کے طور پر نہیں لایا جا سکتا۔

چودھری پرویز الہٰی نے کہا راجہ صاحب میرا منہ نہ کھلوائیں کہ کون کونسے بل کیسے پاس ہوئے۔ میرا صوابدیدی اختیار ہے کہ میں فیصلہ کروں کہ کوئی بل منی بل ہے یا نہیں، پنجاب ایمرجنسی سروس ترمیمی بل 2012 منی بل نہیں ہے۔ جب تک یہ بل ہاؤس میں پیش نہیں کیا جائے گا اجلاس کی کارروائی آگے نہیں چلے گی۔


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>