جناح اسپتال میں 2 بچوں کی پیدائش کا معاملہ،انکوائری رپورٹ میں قصوروارکون؟

کراچی: جناح اسپتال میں دو بچوں کی پیدائش کا معاملہ، انکوائری رپورٹ مکمل، قصوروار سامنے آگیا

کراچی کے جناح اسپتال کی انتظامیہ نے دو بچوں کی پیدائش کے معاملے کی انکوائری رپورٹ مکمل کرلی ہے، جس میں دوسرا الٹراساؤنڈ کرنے والے ڈاکٹر کو قصور وار ٹھہرایا گیا ہے، جناح ہسپتال کی ایگزیکٹو ڈائریکٹر ڈاکٹر سیمی جمالی کو انکوائری رپورٹ پیش کر دی گئی ہے، انہوں نے انکوائری رپورٹ ہیلتھ ڈیپارٹمنٹ کو بھجوا دی ہے۔

انکوائری رپورٹ کے مطابق کورنگی کے ہسپتال میں ہونے والا دوسرا الٹراساؤنڈ غلط قرار دیا گیا ہے، جس میں ایک بچے کی بجائے دو بچے بتائے گئے تھے، جس کی وجہ سے بچے کے والدین بھی ذہنی دباؤ کا شکار ہوئے تھے۔ تاہم جناح ہسپتال میں ایک ہی بچے کی پیدائش کی تصدیق ہوئی ہے۔

انکوائری رپورٹ میں یہ بھی واضح طور پر لکھا گیا ہے کہ دوسرے الٹراساونڈ میں عمر، ایم آر آئی نمبر ، مریض کا نام اور ڈاکٹر کی شناخت بھی واضح نہیں لکھی گئی، جس کی وجہ سے ہم یہ تصدیق نہیں کر سکتے کہ دوسرا الٹراساؤنڈ درست تھا یا نہیں۔

خبر رساں ادارے کے نمائندے کا مذکورہ واقعہ کے حوالے سے بتانا تھا کہ جناح ہسپتال کی ایگزیکٹو ڈائریکٹر ڈاکٹر سیمی جمالی نے ان ہاؤس انکوائری کے دوران ہسپتال میں موجود ڈاکٹر اور سٹاف کے بیانات بھی ریکارڈ کیے ہیں، موقع پر موجود سٹاف نے اپنے بیانات میں اس وقت کی تمام تر صورتحال سے آگاہ کیا ہے۔

جناح اسپتال کی انتظامیہ نے اپنی انکوائری رپورٹ میں یہ بھی واضح کیا ہے کہ کورنگی ہسپتال والوں نے الٹرا ساؤنڈ کے لیے دو بچوں کی فیس پندرہ، پندرہ سو روپے غلط لی ہے۔


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>