ملک میں نئی مردم شماری ہو گی،مشترکہ مفادات کونسل کے اجلاس میں فیصلہ

مشترکہ مفادات کونسل نے  ملک میں نئی مردم شماری کروانے کا فیصلہ کرلیا ہے۔

خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق مردم شماری کے نتائج کے حوالے سے مشترکہ مفادات کونسل (سی سی آئی) کا اجلاس ہوا جس میں  فیصلہ کیا گیا ہے کہ بغیر کسی انتظار کے فوری طور پر نئی مردم شماری کیلئے اقدامات کیے جائیں گے۔

سی سی آئی کے اجلاس کے بعد  میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وفاقی وزیر منصوبہ بندی اسد عمر کا کہنا تھا کہ اجلاس میں  اکثریتی رائے سے مردم شماری کے نتائج کو  منظور کرنے  اور فوری طور پر ملک میں نئی مردم شماری کے فیصلے کیے گئے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ پرانی مردم شماری کو ٹھیک نہیں کرسکتے اور اسے استعمال بھی نہیں کیا جاسکتا، اس مردم شماری سے متعلق وزیراعلی سندھ نے جو فیصلہ کیا وہ ان  کا آئینی حق ہے، ہم چاہتے ہیں کہ نئی مردم شماری کے معاملے پر  تمام سیاسی جماعتیں اور صوبائی حکومتیں  اکھٹی ہوں۔

اسد عمر کے مطابق  نئی مردم شماری کے بنیادی فریم ورک پر کام 6 سے 8 ہفتوں کے اندر مکمل ہوجائے گا، امکان ہے ستمبر سے اکتوبر تک نئی مردم شماری کا عمل بھی شروع کردیں گے جو   مارچ2023 تک مکمل ہوجائے گا، مردم شماری کا یہ عمل 18 ماہ تک جاری رہے گا۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ اس بار مردم شماری میں اقوام متحدہ کے اصول بروئے کار آئیں گے، اور ٹیکنالوجی کا استعمال بھی کیا جائے گا، آئندہ انتخابات سے قبل نئی مردم شماری کے مطابق حلقہ بندیاں بھی  کرواسکیں گے۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >