سپریم کورٹ : جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کی براہ راست کوریج کی درخواست خارج

سپریم کورٹ میں جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کی براہ راست کوریج کی درخواست پر سماعت ہوئی جس پر عدالت نے فیصلہ سنا دیا ۔ تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں جسٹس قاضی فائزعیسیٰ کیس میں نظرثانی اور براہ راست کوریج کی درخواستوں پرسماعت ہوئی۔ جسٹس عمرعطابندیال کی سربراہی میں 10رکنی فل کورٹ نے سماعت کی۔

جسٹس قاضی فائزعیسیٰ اپنی اہلیہ اور بیٹی کے ہمراہ کمرہ عدالت پہنچے۔ جسٹس عمر عطا بندیال نے کہا کہ شہریوں کے حقوق کا تحفظ ریاست کی ذمہ داری ہے، عدالت کی نہیں، انہوں نے دوران سماعت کہا کہ کیس جلد ختم کرنا چاہتے ہیں، سپریم کورٹ کے اختیارات محدود ہیں۔ جسٹس عمر عطا بندیال کا کہنا تھا کہ کسی کے ذاتی مسائل کو ازخود نوٹس میں نہیں سن سکتے۔

نایاب عمرانی کیس ازخود نوٹس میں سنا گیا تھا۔ جس کے بعد سپریم کورٹ کی جانب سے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نظر ثانی کیس کی براہ راست سماعت نشرکرنے سے متعلق درخواست مسترد کر دی گئی۔ کیس کی سماعت براہ راست نشر کرنے کی درخواست 6 ججزکی اکثریتی رائے نے مسترد کی۔ جبکہ اختلافی نوٹ میں براہ راست نشریات کی استدعا منظور کی گئی۔

اختلافی نوٹ میں کہا گیا کہ عدالتی کارروائی براہ راست نشرکرنے کے لیے سپریم کورٹ کی ویب سائٹ پراپ لوڈ کی جائے۔ سپریم کورٹ کے مطابق درخواست پر تفصیلی فیصلہ بعد میں جاری کیا جائے گا۔ خیال رہے کہ سپریم کورٹ نے جسٹس فائز عیسی نظرثانی کیس کی براہ راست نشریات کی درخواست پر فیصلہ 18 مارچ کو محفوظ کیا تھا۔

18 مارچ کو سپریم کورٹ میں ہونے والی سماعت میں جسٹس قاضی فائز عیسی کا کہنا تھا کہ ان کے کیس میں حکومت ملزم ہے، جج کو نکال دیں لیکن بلیک میل نہ کریں، وزیراعظم نے ایک آئینی ادارے پر حملہ کیا، کل عدالت کو بھی کہا جائے گا کہ استعفیٰ دے۔ جسٹس فائز عیسیٰ نے کہا کہ میں نے کبھی یہ نہیں کہا کہ تمام مقدمات میں براہ راست کوریج ہو، صرف اپنے کیس کی براہ راست کوریج کی استدعا کی ہے۔ جس کے بعد عدالت نے فیصلہ محفوظ کر لیا تھا جو آج سنایا گیا۔

  • ہمارے ہاں جوڈیشری اس جدت کو عام کرنے میں ہچکچاہٹ کا شکار ہے جبکہ ہمسایہ ملک بھارت کی گجرات ہائیکورٹ کا یوٹیوب چینل ہے جس پر روزامہ عدالتی کاروائی لائیو دیکھائی جاتی ہے اس سکرین شاٹ کے مطابق 7800 لوگ ایک وقت میں عدالتی کارروائی کو لائیو دیکھ رہے ہیں اور کوئی بھونچال بھی نہیں آیا

    • آپ اتنے اچھے کمنٹس کو بھی لائیک نہیں کیا جا رہا۔ نیازی ڈرتے ہیں کہ سچ سب کے سامنے آ جائے گا۔
      بھارت کو اسی لئے دنیا عزت کی نگاہ سے دیکھتی ہے۔ وہ ٹیکنالوجی میں بھی آگے ہیں اور تعلیم میں بھی۔
      ہمارے ہاں پڑھے لکھے کھوتے نیازی الیکشن چور کے چمچے بن کر رہ گئے ہیں۔
      یہ خبیث اپنی الو کی آنکھیں بند کر کے بس گالی گلوچ کرتے رہتے ہیں۔

  • کیس کو طول دینے کے لیے اسکی اگلی درخواست ہوگی کہ یہ عورت میری بیوی نہیں یے۔۔ پہلے عدالت یہ ثابت کرے کہ یہ عورت میری بیوی ہے۔۔۔ااکت بعد کیس سنے۔

  • The representative of the PML-N in the supreme court has been denied to create a lifafa talk show-like situation in the superior court. I’m sure Hamid Mir has given him this idea.

  • چھوٹا دماغ پٹواری اور بغض ریاست۔ موم بتی مخلوق بھول رہے ہیں کہ ۔یہ وہی ڈرامے باز اور نیت کا چور، منافق قاضی ھے جو اپنی مغلیہ عدالت میں بیٹھ کر پروانہ جاری کرتا ھے کہ خبردار اگر کسی نے ملک کو گنگال کرکے معاشی بربادی پر گامزن کرنے والے کلاسک حدیبہ کیس کی عدالتی کاروائی پر کسی چینل یا اخبار میں ایک لفظ بھی کہنے کی کوشش کی تو پھانسی لگا دوں گا۔

  • اس حرام خور چور فراڈئیے لعنتی منی لانڈر قاضی فائیز عیسی نے حدیبیہ میں جو اپنی ماں بہین بیوی بیٹی بہو کا سودا کرکے حدیبیہ جیسے اوپنُ اور شٹ کیس کو نا کھول کر مجرموں سے ہڈی اور راتب وصول کر کے اور رشوت لے کر اس حرام کے پیسے کو منی لانڈر کرکے جو اس حرام کے پیسے سے یہاں لندن میں جائیداد خریدی اسکی منی ٹریل کب دے گا یہ حرام خور چور فراڈیا
    یا اگر یہ لعنتی فراڈیا اسکا کوئی ثبوت کوئی منی ٹریل نہیں دے رہا تھا اس حرام خور فراڈئے کا کیس سب تک لٹک کیوں رہا ہے ؟ اگر ججز نے اپنے اس کو لیگ حرام خور چور فراڈئے کو ناجائیز فیور دے کر خود بھی اس کے جرم میں شریک ہوکر اسکی قبر میں ہی جانا ہے تو وقت ضائع کرنے کی بجائے اس کو باعزت بری کر دو پھر اللہ جانے اور تمُ جانو اور اللہ کا انصاف جانے اور فائیز عیسی فراڈیا جانے مگر کوئی فیصلہ تو کرو

  • This was another pathetic attempt to delay the case. Lets get to the heart of the case, where did the money for those flats come from? And lets be honest, every man and their dog knows, otherwise he would have thrown the receipts in the face of the SC judges.

  • آج ان حرام خور ججوں کی وجہ سے ملک کے یہ حالات ہیں جنہوں نے ہمیشہ کرپٹ خاندانوں کرپٹ سیاست دانوں کی مکمل پشت پناہی کی ھے اور اپنے اور اپنے خاندانوں کے لئے مراعات حاصل کی ہیں ان ججوں میں ایک لمبی لسٹ ھے جن میں خاص نام منظر عام اچکے ہیں وہ قابل ذکر نام
    قیوم،افتخار،رفیق تارڑ،سعیدالزماں،وغیرہ وغیرہ اور آج کے دور کے قاضی فائز،شوکت صدیقی،قاسم خان، ملک مرحوم وغیرہ وغیرہ
    جنہوں کھل کر حرام شریف کی خدمت کی ہیں اور اج ان کالی بھیڑوں کی وجہ سے ملک اس صورتحال سے دوچار ھے اور ادارے ستو پی کر سو رھے ھیں۔

  • آج رات اس حرام خور چور فراڈئے نے سوچنا ہے کوئی نیا طریقہ اس کیس کو ڈیلے کرنے کا کوئی نیا شیطانی منصوبہ کوئی نئی واردات یہ فراڈیا۔ منی لانڈر رشوت خور سوچ رہا ہوگا
    من سور شاہ ، یحیی آ فریدی ،قربان باقر ، اور اپنئ کرپشن کے حامی چوتھے جج سے نئی سازش نئی واردات کرنے کے مشورے کر رہا ہوگا


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >