کیا شریف خاندان کا محل نما گھر جاتی امرا گرایا جا رہا ہے؟

شریف خاندان کا رائیونڈ گھر کسی بھی وقت گرایا جا سکتا ہے،جیونیوز کے انویسٹیگیشن رپورٹرزاہد گشکوری نے انکشاف کردیا، ٹویٹ پر ذرائع سے بتایا کہ پنجاب حکومت نےشریف خاندان کی رہائش گاہ کی127 کنال زمین کاانتقال منسوخ کردیا ہے۔

رپورٹرزاہد گشکوری نے ٹویٹ میں لکھا کہ پنجاب ریونیوڈپارٹمنٹ کسی بھی وقت راوئیونڈ میں زمین کا قبضہ چھڑانےکیلئےکارروائی کرسکتا ہے۔

انہوں نے مزید لکھا کہ زمین نواز شریف کی والدہ مرحومہ بیگم شمیم  کےنام سے پنجاب حکومت کومنتقل کردی گئی،ذرائع کے مطابق اس سلسلے میں اسسٹنٹ کمشنر رائیونڈ کو ہدایات جاری کردی گئی ہیں۔

ذرائع کے مطابق پنجاب حکومت کی جانب سے منسوخ کی گئی اراضی موضع مانک رائے ونڈ میں شریف خاندان کے گھر کا مرکزی حصہ ہے،حکومت نے شریف خاندان کی رائیونڈ رہائش گاہ کی 127 کنال زمین کا انتقال منسوخ کرتے ہوئے زمین کا انتقال واپس پنجاب حکومت کو دے دیا۔

پنجاب حکومت کا دعویٰ  کررکھا ہے کہ کہ شریف خاندان نے اوقاف کی زمین پر قبضہ کیا ہوا ہے، جبکہ ذرائع شریف خاندان کے مطابق پنجاب حکومت جاتی امرا گرانے کے لیے جعلی دستاویزات پر کام کررہی ہے، شریف خاندان نے یہ زمین 1992، 1997 اور 2015 میں خریدی تھی، جاتی امرا شریف خاندان کامحل نما گھر ہے، جسے گرانے کی اطلاعات سامنے آرہی ہیں۔

  • ٹی ایل پی کے دہشتگردوں کو کسی طرح یہ کہہ کر کہ منوانا چاہیے تھا کہ گستاخ رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم لوہار ہائیکورٹ میں چھپے ہیں۔۔۔ اور انہیں لوہار ہائیکورٹ کیطرف بھیجنا چاہیے تھا۔۔ تاکہ وہاں سے چوروں کے دلالوں کا تو خاتمہ کر دیتے۔۔۔یقین کرے پاکستانی انکی سارے گناہ معاف کر دیتے۔

  • جب تک اس خاندان کی لوٹ کھسوٹ کو سرکاری و عوامی زمینی قبضے کو حکومتی اور عوامی تحویل میں نہیں لیا جائے گا اس خاندان کو قانون عبرت کا نشان نہیں بنائے گا اس ملک اور عوام کو انصاف نظر نہیں آئے گا لوٹ مار کی عوامی کیش دولتِ تو یہ خاندان منی لانڈرنگ کر کے ملک سے باہر نکال کر لے گیا ھے کم از کم عوام ملک کے حصے میں اس قبضہ مافیا کی زمین تو آنی چاہیے


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >