سعد رضوی کی گرفتاری پر جے آئی ٹی بنانے کی درخواست، 2 لاکھ جرمانے کے ساتھ خارج

ایک طرف حکومت کی جانب سے تحریک لبیک پرپابندی لگادی گئی، دوسری جانب لاہور ہائیکورٹ نے ٹی ایل پی کے سربراہ سعد رضوی کی گرفتاری پر جے آئی ٹی بنانے کی درخواست خارج کردی ہے۔

چیف جسٹس قاسم خان نے درخواست 2 لاکھ جرمانے کے ساتھ خارج کرتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ کبھی غور کیا ہے اسلام روڈ بلاک کرنے کے بارے میں کیا کہتا ہے؟ روڈ بلاک ہونے سے کتنی مشکلات ہوتی ہیں، ایمبولینس میں کئی لوگ مرگئے، پولیس کے کتنے لوگ شہید اور زخمی ہوئے، کیا آپ نے سوچا ہے؟

چیف جسٹس ہائیکورٹ نے استفسار کیا کہ کس قانون کے تحت جے آئی ٹی بنا دیں؟ آپ کی عدالت سے استدعا کیا ہے؟ چیف جسٹس قاسم خان نے استفسار کیا کہ آپ کی عدالت سے استدعا کیا ہے؟ یہ پنچائیت نہیں ہے، قانون کی بات کریں۔

درخواستگزار وکیل نے کہا کہ پولیس نے قانون کے مطابق اپنی ذمہ داری نبھائی،چیف جسٹس نے درخواست گزار پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے عدالت کا وقت ضائع کرنے پر دو لاکھ جرمانہ بھی عائد کردیا۔

درخواست میں تحریک لبیک کے سربراہ حافظ سعد رضوی کی گرفتاری اور اسکے بعد پیدا شدہ صورتحال کی تحقیقات کے لئے عدالت جے آئی ٹی بنانے کا حکم دینے کی استدعا کی تھی۔

وفاقی کابینہ نے تحریک لبیک پاکستان پرپابندی کی منظوری دیدی ہے، وفاقی کابینہ سے منظوری سرکولیشن سمری کے ذریعے لی گئی، انسداددہشتگردی ایکٹ کے تحت پابندی کی منظوری دی گئی،وزارت داخلہ نے سمری وفاقی کابینہ کو بھجوائی تھی،پنجاب حکومت نےتحریک لبیک پرپابندی کی سفارش کی تھی۔

مذہبی جماعت تحریک لبیک پاکستان کی جانب سے پرتشدد مظاہروں اور احتجاج کے بعد وزارت داخلہ نے 1997 کے انسداد دہشت گردی قانون کے تحت پابندی عائد کرنے کا فیصلہ کیا گیا تھا۔

  • یہ کیا انہونی بات کیسے ہوئی یقین نہیں آ رہا کہ لوہار کورٹ اور خاص طور پر جسٹس قاسم مفاد عامہ اور محب وطنی کے حق میں فیصلہ بھی کر سکتا ہے
    اگر یہ سچ ہے تو بڑی بات ہے
    پھر لوہار کورٹ میں ایسے فیصلے ہوں جو مفاد عامہ پر ہوں انہونی بات ہی لگتی ہے

  • یہ سب سوشل میڈیا کی آواز ھے پاکستان کے دشمنوں کے خلاف خلاف آواز بلند رکھو جو بھی حرام خور ملک کے اداروں میں بیٹھ کر حرام خوری کرے ان کے خلاف آواز بلند کرتے رہو سب ٹھیک ہو جائے گا۔ انشاء اللہ


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >