انکوائری مکمل، پولٹری کی قیمتوں میں اضافے پر گٹھ جوڑ سامنے گیا

مسابقتی کمیشن آف پاکستان نے پولٹری انڈسٹری میں انکوائری مکمل کرلی۔ جس کے مطابق ملک بھر میں پولٹری فیڈ ملوں کے درمیان کارٹلائزیشن اور گٹھ جوڑ سے قیمتوں میں اضافے کا انکشاف ہوا ہے۔

مسابقتی کمیشن کی انکوائری میں انکشاف ہوا ہے کہ 19 پولٹری فیڈ کمپنیاں قیمتوں کے تعین کے حوالے سے مبینہ گٹھ جوڑ میں ملوث ہیں اور ان کی مبینہ مقابلہ بازی مخالف سرگرمیاں پولٹری فیڈ کی قیمتوں میں اضافے کا باعث بنی ہیں۔

رپورٹ کے مطابق پولٹری فیڈ برائلر گوشت اور انڈوں کی لاگت کا تقریبا 75 سے 80 فیصد ہے۔ لہٰذا پولٹری فیڈ کی قیمتوں میں اضافے سے مرغی اور انڈوں کی قیمتوں پر اثر پڑتا ہے۔دسمبر 2018 سے دسمبر 2020 کے درمیان فیڈ ملوں نے آپس میں ملی بھگت کر کے پولٹری فیڈ کی قیمتوں میں اوسطاً 836 روپے فی 50 کلوگرام یعنی 32 فی صد اضافہ کیا۔

ادارہ شماریات کے ستمبر 2020 کے اعدادوشمار کے مطابق مرغی کی قیمتوں میں 18.31 فیصد اور انڈوں کی قیمتوں میں 5.2 فیصد اضافہ ہو، یہ اضافہ پولٹری فیڈ کی قیمتوں میں 100 روپے فی بیگ اضافہ کے ساتھ ہوا۔

اکتوبر 2020 میں پولٹری فیڈ ملوں کے ایک اور اضافے کے بعد یعنی لیر کی قیمتوں میں 125 روپے فی 50 کلو بیگ اور برائلر فیڈ کی 175 روپے فی 50 کلو بیگ اضافہ مرغی کی قیمتوں میں 26.62 فیصد اور انڈوں کی قیمتوں میں 23.81 فیصد اضافہ ہوا۔

نومبر 2020 میں پولٹری فیڈ کی قیمتوں میں ایک بار پھر 150 روپے فی 50 کلو گرام بیگ کا اضافہ ہوا جس کے بعد مرغی اور انڈوں کی قیمتوں میں بالترتیب 20.76 فیصد اور 5.23 فیصد کا اضافہ ہوا۔

دسمبر 2020 میں پولٹری فیڈ کی قیمتوں میں ایک اور 250 روپے فی 50 کلو گرام اضافہ ہوا جس کے بعد مرغی اور انڈوں کی قیمتوں میں بالترتیب 3.21 فیصد اور 14.08 فیصد اضافہ ہوا۔

  • حمزہ ککڑی اور اس کے دلال بدکردار باپ نے پاکستان میں
    بزنس کو جرم کا دہندہ بنا کے رکھ دیا
    حیرت ہے اس قوم پر ان کے منہ پر روز جوتے پڑتے ہیں یہ پھر کرتے ہیں
    شیر ایک واری فیر بھٹو ابھی زندہ ہے

    • O yar pichlon ne ye kia pichlon ne wo kia kab tak chalay ga. Pichlon ne Jo kia usi ki waja se to hum ne in ko vote dia. Agar in se mafias control nahi ho rahay aor mehngai control nahi kar pa rahay, cartels banay hua hain to ye kis liye baithay hain. Agar main bator baap k apne ghar main logon ko control nahi kar sakta to lanat mere baap honay pe. PM awam k baap ki tarah hota hai us ne ministers aor assistants ki foj ikhatti kar rakhi hai aor koi cheez ye theek nahi kar pa rahay. Ab is report main hai k December 2018 se December 2020 tak feed companies ne prices main gath jor kia tha aor ab ja k govt ko time mila siraf ye pata karnay k liye k masla kia hai. Agar nahi sambhaal saktay to maafi mangain aor ghar jayen. Flour, sugar, petrol aor ab ye poultry kia in sab ko pichli govts control karaingi ya inhon ne karna hai. Please be practical. PTI ko hum ne perform karnay k liye vote dia tha aor agar perform nahi kar pa rahay to bhaar main jaye PTI aor agli dafa kisi aor ko vote de daingay

    • Everyone is more powerful than this govt. Nikammi govt nikammay log. Siraf is baat pe 5 saal nahi guzar saktay k PM khud theek hai aor us ki niyyat theek hai. Awam ko performance chahiye jo k 0 hai

  • Is.mafia ko jailon main dalen kiya mafia mafia hakomat ki rit b koi chiz ha in ko ulta latka kar korey maro khud hi thik hojayen ge in beghairton ne andey murghi b ghateeb se cheen li ha

  • After this report, what action has been taken. As expected action would be the same as done with the mafia of flour, sugar etc. If gov. cannot control it should leave it and go home


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >