دنیا بھر میں ہر سال کتنے کروڑ ٹن کھانا کوڑے کی نذر ہوجاتا ہے؟

جانیئے جو کھانا آپ اپنی پلیٹ میں چھوڑ دیتے ہیں یہ مل کر سالانہ کتنا کھانا ضائع ہوتا ہے؟

ہم اپنا پیٹ بھرنے کے بعد پلیٹ میں جتنا بھی ہو اسے یہ سوچ کر چھوڑ دیتے ہیں کہ اب ہمیں اس کی ضرورت نہیں لیکن کبھی آپ نے سوچا ہے کہ اس طرح پلیٹ میں بچا تھوڑا تھوڑا کھانا ملکر سال میں کتنا کھانا ضائع ہو جاتا ہے؟ اس سوال کا جواب اقوام متحدہ کے ماحولیاتی پروگرام (UNEP) کے فوڈ ویسٹ انڈیکس نے دیا ہے جس کے مطابق دکانوں، گھروں اور ریستورانوں میں صارفین کے لیے دستیاب 17 فی صد خوراک کی منزل کوڑے کا ڈبہ بنتا ہے۔

فصیلات کے مطابق دنیا بھر میں ہر سال 92 کروڑ ٹن ایسی چیزیں کوڑے کی نذر ہو جاتی ہیں، جو کھانے پینے کے قابل ہوتی ہیں۔ جو کھانا ضائع ہوتا ہے اس کا 60 فیصد حصہ گھروں سے آتا ہے، زیادہ کھانا امیر ممالک میں ضائع ہوتا ہے جب کہ کم آمدنی والے ممالک بظاہر کھانے کے قابل استعمال حصے کو کم ضائع کرتے ہیں۔

اقوام متحدہ کے ایک عہدیدار رچرڈ سوانیل کا کہنا ہے کہ ہر سال کھانا ضائع ہونے والی مقدار اتنی زیادہ ہے کہ اسے 40 ٹن وزن اٹھانے والے 2.3 کروڑ ٹرکوں میں بھرا جا سکتا ہے، اگر یہ ٹرک بمپر ٹو بمپر ایک قطار میں کھڑے کیے جائیں تو ان کی یہ قطار دنیا کے گرد 7 مرتبہ چکر لگانے جتنی طویل ہوگی۔

البتہ لاک ڈاؤن کے دوران حیران کُن طور پر برطانیہ میں گھریلو خوراک کے ضیاع میں کمی آئی ہے۔ لاک ڈاؤن میں پکانے میں احتیاط کی وجہ سے 2019 کے مقابلے میں گزشتہ سال خوراک کے ضیاع میں 22 فی صد کمی آئی ہے۔

یو این ای پی کی ایگزیکٹو ڈائریکٹر انگیر اینڈرسن نے دنیا سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ 2030 تک خوراک کے ضیاع کی مقدار کو نصف پر لانے کا عہد کریں۔


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>