بجٹ میں غلط اعدادوشمار پیش کیے گئے، مولانا فضل الرحمان

بجٹ میں غلط اعدادوشمار پیش کیے گئے، مولانا فضل الرحمان

جمیعت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے آج حکومت کی جانب سے قومی اسمبلی میں پیش کردہ بجٹ پر تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت نے بجٹ میں غلط اعدادوشمار پیش کیے ہیں۔

لاہور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ ملکی معیشت جمود کا شکار ہے اور موجودہ حکومت میں یہ صلاحیت نہیں ہے کہ وہ معیشت کو بہتر کرسکیں، بجٹ میں قوم سے غلط بیانی کی گئی اور سارا ملبہ وزیر خزانہ شوکت ترین پر ڈال دیا گیا ہے۔

سربراہ جمیعت علمائے اسلام (ف) کا کہنا تھا کہ میں نے پارلیمنٹ میں 40 سال گزارے ہیں بجٹ کو بہت اچھے سے سمجھتا ہوں ،ملک معاشی بدحالی کا شکار ہے، عام آدمی مہنگائی میں پسا ہوا ہے، کوئی سکھ کا سانس نہیں لے سکتا ، ملک کا ایک طبقہ اپنی خوشحالی کو پورے ملک کو کی خوشحالی سمجھتا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ حکومت نے کبھی لاشوں کے بدلے اور کبھی دہشت گردی کے بدلے پیسے لیے، ملک میں یہ حالات ہیں کہ مسجد، مدرسہ بنانے کیلئے ، قرآن کی تعلیم دینے کیلئے ایف اے ٹی ایف سے اجازت لینا ہوگی۔

مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ حکومت کو ایسے قوانین واپس لینا ہوں گے ، ہم ایسے قانون منظور نہیں ہونے دیں گے کیونکہ ہم غلامی کو قبول نہیں کرسکتے ہمیں آزاد فضاؤں میں سانس لینی ہے۔

  • لو بھئی اسی حرام کے پلے بلڈاگ نسل کے خنزیر نطفہ حرام مودی کے پالتو کتےپاکستان کی تشکیل کو گناہ بھونکنے والے نطفہ حرام منافق اسلامٗفروش آگے پیچھے اوپر نیچے کے حرامی گے اور روزانہ اپنی کھرک کی وجہ سے اپنی ساتھ بد کاری کرانے والے ممیسئیے خنزیر الشیطان نطفہ حرام کی کسر رہ گئی جو حرامئ اپنے بوائے فرینڈز سے اپنی کھرک مٹوانے کا حساب نہیں رکھ سکتا ایسا ممیسیا اور پاکستان کی فوج پر بھونکنے والو مودی کا پالتو کتا بھی ماہر معاشیات بن رہا ہے جو اصل ماہر حرامیات ہے نطفہ حرام

  • Fazlu only thinks about his own benefits!! These are people who never reformed madrasa!! They demand money but refuse audit!! And all this in the name of Islam!! Worst person in Pakistan!

  • بہت کمُ سور یا سور کے بچے ایسے ہوتے ہیں جو سور ہوکر بھی کتوں کی طرح بھونکتے ہیں جن میں ایک یہ خنزیری نسل کا بلڈاک ممیسیا منافق اسلام فروش حرامی بلیک میلر بھی ہے

  • فضل الرحمن ! چوروں کی دلالی اور وکالت کا انجام ، رسوائی + رسوائی +رسوائی . اگر 11 چور اسلام آباد کے 22 نمبر بنگلے میں پچھلے 33 سال تک سالانہ 44 لاکھ کا دہی کا شربت اپنے ڈاکو امام کے ساتھ با جماعت پئیں تواگلے 55 سال تک دماغ صرف کرسی کرسی کرتا ہے . ابھی اگلے 11 سال مزید نشہ نہیں اترے گا ..اگر یہی حالت رہی تو 2023 میں کیا ہو گا =پھرتے ہیں میر خوار کوئی پوچھتا نہیں – اس عاشقی میں عزت سادات بھی گئی .


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >