کفایت شعاری مہم، وزیراعظم  ہاؤس و آفس کے اخراجات میں 1 ارب سے زائد کی بچت

کفایت شعاری مہم، وزیراعظم  ہاؤس و آفس کے اخراجات میں 1 ارب سے زائد کی بچت

وزیراعظم عمران خان کی سرکاری اخراجات کے حوالے سے کفایت شعاری مہم کی ایک اور مثال سامنے آگئی، تین سالوں کے دوران وزیراعظم کے صوابدیدی  فنڈ  سے ایک روپیہ بھی خرچ نہیں ہوا۔

خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق  وزیراعظم آفس و ہاؤس کے اخراجات سے متعلق تازہ ترین  تفصیلات سامنے آگئی ہیں جن میں دعویٰ کیا جارہا ہے کہ وزیراعظم نے اپنے صوابدیدی فنڈ میں سے 3 سالوں کے دوران ایک روپیہ بھی خرچ نہیں کیا ہے۔

رپورٹ کے مطابق وزیراعظم نے اپنی کفایت شعاری مہم کے وعدوں کو پورا کردیا ہے، اور مسلسل تیسرے سال بھی اپنے آفس  و سرکاری رہائش گاہ کے اخراجات میں کمی کا تسلسل برقرار رکھا ہے۔

وزیراعظم آفس و رہائش گاہ کے اخراجات میں تین مالی سال کے دوران مجموعی طور پر 1 ارب 8 کروڑ روپے کی بچت کی گئی، اعدادوشمار کے مطابق وزیراعظم آفس کے اخراجات میں پہلے مالی سال کے دوران 28 فیصد ، دوسرے مالی سال میں 21 فیصد اور تیسرے مالی سال کے دوران 29 فیصد بچت کی گئی ہے۔

اسی طرح وزیراعظم ہاؤس کے اخراجات میں پہلے سال 28 فیصد ، دوسرے مالی سال میں  38 فیصد اور  تیسرے مالی سال کے دوران 41 فیصد کمی کی گئی ہے، اس طرح  وزیراعظم ہاؤس کے اخراجات کیلئے مختص بجٹ میں تین سالوں کے دوران 565 ملین روپے کی بچت ہوئی۔

اعدادو شمار کے مطابق وزیراعظم کے صوابدیدی فنڈ کیلئے مختص بجٹ میں سے ان تین سالوں کے دوران  ایک روپیہ بھی استعمال نہیں کیا گیا، تین سالہ دور حکومت میں وزیراعظم عمران خان نے ایک بھی کیمپ آفس نہیں بنایا لہذا اس مد میں بھی اخراجات صفر رہے۔

رپورٹ کے مطابق آصف علی زرداری نے اپنے دور حکومت میں 2 کیمپ آفس قائم کیے جن پر 2 اعشاریہ6 بلین روپے کے اخراجات آئے جس میں سیکیورٹی اخراجات شامل نہیں ہیں، اسی طرح  نواز شریف  نے اپنے دور حکومت میں رائیونڈ میں کیمپ آفس قائم کیا جس پر 4 اعشاریہ 3 بلین روپے کے اخراجات سیکیورٹی کے علاوہ آئے۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >