بلوچستان اسمبلی کے باہر اپوزیشن کا احتجاج،وزیر اعلی جام کمال پر جوتا پھینک دیا گیا

بلوچستان اسمبلی کے باہر نئے مالی سال کے بجٹ کے خلاف اپوزیشن کے احتجاج جاری تھا کہ وزیراعلی جام کمال پر اپوزیشن کے کارکنان نے گملے اور جوتے پھینکے ، تاہم وزیراعلی اس حملے میں محفوظ رہے۔

رپورٹ کے مطابق بلوچستان اسمبلی کے باہر ماحول اس وقت شدید خراب ہوگیا جب مظاہرین کو منتشر کرنےکیلئے پولیس کی جانب سے شیلنگ کی گئی، اپوزیشن کے کارکنان اس حملے پر آپے سے باہر ہوگئے اور سیکیورٹی اہلکاروں سے لڑنا شروع ہوگئے۔

اسی دوران وزیراعلی جام کمال سیکیورٹی حصار میں اسمبلی کے احاطے میں داخل ہوئے جنہیں دیکھتے ہی مظاہرین نے ان پر گملے اور جوتے پھینکنے کی کوشش کی مگر جام کمال اس حملے میں محفوظ رہے۔

واقعے پر صوبائی وزیر ضیا لانگو نے کہا کہ احتجاج اپوزیشن کا حق ہے مگر اب بدتمیزی شروع ہوگئی ہے، حملوں میں ہماری خواتین اراکین بھی زخمی ہوئی ہیں اپوزیشن بلوچستان اسمبلی کا بجٹ سیشن شروع ہوتے دیکھنا نہیں چاہتی، تاہم اجلاس ہر صورت ہوگا، حالات کچھ دیر میں معمول پر آجائیں گے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق بدمزگی اور ہنگاموں کے دوران2 اراکین اسمبلی زخمی بھی ہوئے جبکہ پولیس نے وزیراعلی پر حملہ آور ہونے والے افراد کو گرفتار کرنے کیلئے کوششیں تیز کردی ہیں جو آخری اطلاع تک ناکام رہی ہیں۔

واضح رہے کہ قومی اسمبلی میں بجٹ سیشن کے دوران بھی ہنگامہ آرائی ہوئی تھی جس میں ایوان کے اندر اراکین اسمبلی کی جانب سے گالم گلوچ کی گئی اور ایک دوسرے پر بجٹ کی کتابیں پھینکی گئیں جس سے متعدد اراکین زخمی ہوگئے، واقعے پر اسپیکر قومی اسمبلی نے 7 اراکین کی ایوان میں داخلے پر پابندی بھی عائد کردی تھی۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >