مفتاح اسماعیل پھرمشکل میں، 4 ارب کی مشکوک ٹرانزیکشن کا نیا کیس کھل گیا

قومی احتساب بیورو نے سابق وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کو ایک بار پھر اپنے ریڈار پر لیتے ہوئے ان کے خلاف 4 ارب کی مشکوک ٹرانزیکشن کا کیس کھول لیا ہے۔

خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق نیب کی جانب سے یہ کیس اسٹیٹ بینک آف پاکستان کی جانب سے موصول ہونے والی ایک شکایت پر کھولا گیا ہے

رپورٹ کے مطابق اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے نیب کو ایک شکایت ارسال کی جس میں کہا گیا ہے کہ مفتاح اسماعیل کے بینک اکاؤنٹس میں مشکوک ٹرانزیکشنز دیکھی گئی ہیں جن کے ذریعے مفتاح اسماعیل کے اکاونٹس میں غیر معمولی رقوم جمع کروائی گئی۔

شکایت موصول ہونے کے بعد نیب نے مفتاح اسماعیل کے خلاف 4 ارب روپے کی مشکوک ٹرانزیکشنز کا کیس کھولتے ہوئےانکوائری شروع کردی ہے جس میں مفتاح اسماعیل کی وزارت کے دوران 4 ارب کی مشکوک ٹرانزیکشنز سے متعلق سوالنامہ جاری کیا جائے گا۔

واضح رہے کہ مفتاح اسماعیل کو اس سے قبل نیب نے ایل این جی اسکینڈل کیس میں گرفتار کیا تھا

مسلم لیگ ن کے سابق دور حکومت میں اس وقت کے وزیر پٹرولیم شاہد خاقان عباسی نے قطر کے ساتھ ایل این جی درآمد کرنے کا معاہدہ کیا تھا مفتاح اسماعیل پر الزام تھا کہ انہوں نے ایل این جی کی درآمد اور تقسیم کا 220 ارب روپے کا ٹھیکہ دیا جس میں وہ خود حصہ دار ہیں۔

دسمبر 2019 میں اسلام آباد ہائی کورٹ نے ایک کروڑ روپے کے مچلکے پر مفتاح اسماعیل کی ضمانت منظور کی۔ چیف جسٹس اطہرمن اللہ کا کہنا تھا کہ وائٹ کالر کرائم میں گرفتاری کی ضرورت نہیں، ملزم کے ریکارڈ کے تحت کارروائی کریں۔

  • اس حرام زادے کرپٹ نطفہ حرام کئ آدھا گھنٹہ ننگا کرکے تشریفی چھترول کرو اپنے مونہہ سے فر فر بھونکے گا اپنی لوٹ مار اور حرام زدگیاں
    اور فراڈ قبول کرے گا


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >