اسلام آباد: نورمقدم کیس میں اہم انکشافات

وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں قتل ہونے والی سابق سفارتکار شچوکت مقدم کی صاحبزادی نورمقدم قتل کیس کی ‏تفتیش میں اہم انکشافات سامنے آئے ہیں۔

دو روز قبل تھانہ کوہسار میں ہونے والی نورمقدم کے قتل ملوث ملزم ظاہر جعفر کو پولیس نے ‏گرفتار کر کے واقعے کی تفتیش شروع کر دی ہے۔

پولیس تفتیش نے اپنی تفتیش میں انکشاف کیا ہے کہ ملزم ظاہرجعفر کے پاس امریکاکی شہریت ہے اور ملزم کا بدھ کے روز امریکاواپس ‏جانے کا بھی پلان تھا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ خاتون کوقتل کرنے پرملازم نے ملزم کے والد کو آگاہ کیا ملزم کےقبضہ ‏سےآلہ قتل بھی برآمد کرلیا گیا۔

ایس ایس پی مصطفیٰ کے مطابق بظاہر ملزم کی جانب سے واردات منصوبہ بندی لگتی ہےکیس ‏میں ہر پہلو سے تفتیش کی جارہی ہے ملزم کو کسی صورت کوئی رعایت نہیں ملے گی۔

پولیس حکام کے مطابق لڑکی کے والد نے پولیس کو بتایا کہ ان کی بیٹی 19 تاریخ کو گھر سے گئی تھیں جس کے بعد ان کا فون نمبر بند ہو گیا تھا، تاہم دوبارہ رابطہ ہونے پر مقتولہ نے بتایا کہ وہ لاہور جا رہی ہیں۔

مقتولہ نور مقدم کے والد نے بتایا کہ ظاہر جعفر کے والد ذاکر جعفر کی فیملی سے انکے ذاتی تعلقات تھے ، 20 تاریخ کو انھیں ظاہر جعفر نے مجھے فون کیا اور اور بتایا کہ نور ان کے ساتھ نہیں ہے لیکن رات دس بجے انھیں تھانے سے کال آئی کہ آپ کی بیٹی نور مقدم کا قتل ہو گیا ہے آپ تھانہ کوہسار آ جائیں۔

نور کے والد کے مطابق پولیس مجھے جس گھر میں لے کر گئی وہ ان کے بقول ظاہر جعفر کا گھر تھا۔ اندر جا کر دیکھا کہ میری بیٹی کو بے دردی سے تیز دھار آلے سے قتل کر کے اس کا سر جسم سے کاٹ کر علیحدہ کر دیا ہے۔

انڈیپنڈنٹ اردو کی صحافی عفت حسین رضوی نے ملزم سے متعلق انکشاف کیا ہے کہ ملزم ظاہر جعفر باپ دادا کی کمپنی احمد جعفر اینڈکو کا چیف برانڈ اسٹرٹیجسٹ تھا اور تھراپی ورکس اسلام آباد سے تربیت یافتہ سائیکو تھراپسٹ تھا۔

عفت رضوی نے مزید بتایا کہ بیکن ہاؤس کے بچوں کو نوجوانی کے چیلنجز پر لیکچر دینے والا اس قصاب کو جب نفسیات پڑھانے والے اساتذہ نہیں پہچان سکے تو ایک لڑکی کیسے پہچان لیتی

  • Qatil ki amreeki shehriyat buhat kuch bata rahi hai, key iskay peechay kaun hai, aur isko yaqeen dahani karwaye gayi hogi ke uska baal bhi beka nahi hoga, hum dekhain gay ke qatil buhat jald ya to zehni marz ki wajah say bari hoga ya sirtay say qatal may mulawas nahi that sabit kar diya jayega. Ye tamam koshishain ABSOLUTELY NOT key baad shuru hui hai, hamari aankhain khulni chahiyain.


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >