سابق افغان مشیر نے بھارت کے پاکستان پر الزامات کو بے بنیاد قرار دے دیا

سابق افغان مشیر نے بھارت کے پاکستان پر الزامات کو بے بنیاد قرار دے دیا

افغانستان کے سابق مشیر توریک فرہادی نے بھارت کی جانب سے پاکستان پر افغانستان میں دہشتگردی کرنے کے الزام کو بے بنیاد قرار دیتے ہوئے مسترد کر دیا۔

تفصیلات کے مطابق سابق مشیر توریک فرہادی نے حال ہی میں ایک بھارتی چینل پر افغانستان کی موجودہ صورتحال پر بات کی۔ نیوز پروگرام کی اینکر پریانکا شرما نے پروگرام کے دوران دعوی کیا کہ پاکستان کا دوہرا معیار بے نقاب ہوگیا ہے، ایک طرف پاکستان اور چین افغانستان میں انسداد دہشت گردی کی کارروائیوں کا منصوبہ بنا رہے ہیں، دوسری جانب پاکستان دہشتگردوں کو افغانستان بھیج رہا ہے۔

پریانکا شرما نے سبق افغان مشیر کو پاکستان کو افغان فوجیوں کو محفوظ راستہ فراہم کرنے اور این ایس اے معید یوسف کے دورہ امریکہ کے بارے میں بھی تازہ ترین معلومات دیں۔

اینکر کا کہنا تھا کہ این ایس اے نے ایسے وقت میں امریکہ کا دورہ کیا جس سے لگتا ہے کہ پاکستان امریکہ کو راضی کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔

علاقائی معاملات سے متعلق تازہ ترین خبریں دینے کے بعد پریانکا شرما نے پاکستان پر افغانستان میں اپنی سرگرمیوں کے حوالے سے دنیا کو گمراہ کرنے کا الزام لگایا، انہوں نے یہ بھی کہا کہ افغان حکومت نے تصدیق کی ہے کہ پاکستانی دہشت گرد گروہوں لشکر طیبہ اور جیش محمد نے افغانستان میں اپنے اڈے منتقل کر رہے ہیں۔

بھارتی اینکر نے اس بیان کو یہ کہتے ہوئے درست قرار دیا کہ افغان صدر اشرف غنی نے ازبکستان میں اپنے خطاب میں اس بات کی تصدیق کی ہے کہ پاکستان سے لگ بھگ 10،000 دہشت گرد افغانستان میں داخل ہوئے ہیں۔

اس کے بعد انہوں نے سابق افغان مشیر تورک فرہادی کو اس معاملے کی وضاحت کے لئے مدعو کیا۔ اینکر نے تورک فرہادی سے سوال کیا کہ چین اور پاکستان ایک ساتھ مل کر افغانستان میں کام کریں گے، خاص طور پر جب بات سی پیک کی ہو، یہ اتحاد افغانستان میں عدم استحکام کو کس طرح متاثر کرے گا؟

سابق مشیر نے جواب میں اس بیان کو بے بنیاد قرار دیتے ہوئے کہا کہ انہوں نے اس حوالے سے کوئی ٹھوس خبر نہیں دیکھی، انہوں نے کسی بھی قابل اعتماد عالمی سطح کے نیوز فورم پر ان رپورٹس کو نہیں دیکھا جس کا وہ حوالہ دے رہی ہیں۔

واضح رہے کہ پاکستان اور چین نے افغان طالبان کو مشرقی ترکستان اسلامی تحریک (ای ٹی آئی ایم) ، تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) اور دیگر تمام دہشت گرد تنظیموں کے ساتھ تعلقات ختم کرنے کا الٹی میٹم دیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان اور چین نے مشترکہ طور پر افغان طالبان کو واضح طور پر ٹی ٹی پی سمیت دیگر دہشتگرد تنظیموں سے تعلقات ختم کرنے کا کہا ہے جن سے دونوں ممالک اور خطے کو براہ راست خطرات لاحق ہیں۔

دونوں ممالک کی جانب سے طالبان کو واضح الفاظ میں بتایا گیا ہے کہ انہیں اپنے زیر کنٹرول علاقوں سے بھی نکالنا ہو گا۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >