نور مقدم کیس: ملزم ظاہر جعفر کو  جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا گیا

نور مقدم کو قتل کرنے والے ملزم ظاہر جعفر سے پولیس نے تفتیش مکمل کرلی ہے جس کے بعد انہیں جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیاگیا ہے۔

خبررساں ادارے کی رپورٹ کے اسلام آباد کی جوڈیشل عدالت میں مجسٹریٹ شائستہ کنڈی نے نور مقدم قتل کیس کی سماعت کی، کوہسار تھانے کی پولیس نے جسمانی ریمانڈ مکمل ہونے پر ملزم کو عدالت کے روبرو پیش کیا۔

دوران سماعت پولیس نے عدالت کو بتایا کہ قتل کی واردات کو 12 روز گزر چکے ہیں، ملزم سے تفتیش مکمل کرلی گئی ہے لہذا مزید جسمانی ریمانڈ کی ضرورت نہیں ہے، جس پر عدالت نے ملزم کو 14روزہ جوڈیشل ریمانڈ جیل بھیجنے کی ہدایت کرتے ہوئے سماعت 16 اگست تک ملتوی کردی ہے۔

اسلام آباد کی جوڈیشل عدالت میں نور مقدم کیس کی سماعت کے دوران سیکیورٹی کے غیر معمولی اقدامات کیے گئے تھے اور قانون نافذ کرنے والے اداروں نے ایف ایٹ کچہری اور اطراف کو اپنے حصار میں لے رکھا تھا۔

یادرہے کہ اسلام آباد میں 20 جولائی کو ایک افسوسناک واقعہ پیش آیا جس میں سابق سفیر کی بیٹی نور مقدم کو ظاہر جعفر نامی شخص نے اپنے ہی گھر میں تشدد کرکے قتل کردیا تھا، پولیس نے ملزم کو گرفتار کرلیا تھا، دوران تفتیش ملزم ظاہر جعفر نے قتل کا اعتراف کرتے ہوئے بتایا کہ نور مقدم نے ان سے بیوفائی کی جس کی وجہ سے انہوں نے اسے قتل کردیا۔

وزیراعظم عمران خان نے بھی نور مقدم قتل کیس بارے کہا تھا کہ ملزم جتنا بھی طاقتور ہو سزا سے نہیں بچ پائے گا اور میں اس کیس کو زاتی طور پر دیکھ رہا ہوں۔


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>