ملتان:عدالت کا گرفتار 3 ٹک ٹاکر بھائیوں کو رہا کرنے کا حکم،انہیں کیوں نظر بند کیا گیا تھا؟

لاہور ہائی کورٹ ملتان بینچ نے ٹک ٹاک ویڈیو بنا کر دہشت پھیلانےکے الزام میں گرفتار تین بھائیوں سمیت 4 افراد کو رہا کرنے کا حکم دے دیا۔

تفصیلات کے مطابق ہائی کورٹ ملتان بینچ کے جسٹس انوار الحق پنوں نے ٹک ٹاک ویڈیو بنا کر دہشت پھیلانے کے الزام میں نظر بند افراد کے کیس کی سماعت کی۔

3 بھائیوں سمیت 4 افراد کو عدالت میں پیش کیا گیا جبکہ ان کے وکیل رانا جاوید اقبال نے چاروں ٹک ٹاکرز کی رہائی کے لیے دلائل پیش کئے۔

وکیل رانا جاوید اقبال نے موقف اختیار کیا کہ ڈپٹی کمشنر ملتان علی شہزاد نے 15 جولائی کو ٹک ٹاکر بھائیوں محمد طارق ، محمد اصغر ، محمد عارف اور ان کے رشتہ دار محمد ذیشان کی نظر بندی کے احکامات جاری کر کے انہیں نظر بند کر دیا جو غیر قانونی اقدام ہے۔

وکیل کا مزید کہنا تھا کہ چاروں ٹک ٹاکرز کی کسی ویڈیو سے دہشت نہیں پھیلی اور اسلحے کا استعمال بھی نہیں کیا گیا۔ جسٹس انوار الحق پنوں نے ویڈیو میں اسلحہ استعمال نہ کرنے اور دہشت پھیلانا ثابت نہ ہونے پر چاروں ٹک ٹاکرز کو رہا کرنے کا حکم دے دیا۔

عدالت کی جانب سے تمام ٹک ٹاکرز کی رہائی کے احکامات جاری کر دیئے گئے ہیں۔

واضح رہے کہ چار روز قبل ڈپٹی کمشنر ملتان علی شہزاد نے ٹک ٹاک ویڈیو بنا کر دہشت پھیلانےکے الزام میں 3 بھائیوں سمیت 4 ٹک ٹاکرز کو 1 ماہ کے لیے نظر بند کردیا تھا۔


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>