میری وفات کے بعد پورے پاکستان کے ہر شہر،ہر گاﺅں میں نماز جنازہ پڑھیں: ڈاکٹر عبدالقدیر

پاکستان کو ایٹمی طاقت بنانے والے سائنسدان ڈاکٹرعبدالقدیر کورونا کا شکار ہیں، جس کی وجہ سے ان کی طبیعت ناساز ہے اور وہ اسپتال میں زیر علاج ہیں، قوم کی جانب سے اس عظیم شخص کی صحیتابی کیلئے دعائیں کی جارہی ہیں، جبکہ ڈاکٹرعبدالقدیر کی جانب سے بھی دعا کی درخواست کردی گئی ہے۔

سینئر صحافی حامد میرنے ٹویٹر پر ایک اخباری تراشہ شیئر کیا، جس کے مطابق محسن پاکستان اور محافظ پاکستان کی جانب سے صحت یابی کی درخواست کی گئی،حامد میر کی جانب سے شیئر کی گئی تصویر میں لکھا دیکھا جاسکتا ہے کہ ”ہم سب کو رب العزت نے پیدا کیا اورہم سب کو ایک دن موت کا مزہ چکھنا ہے۔ اور خالق حقیقی کے سامنے اپنے اعمال کی جواب دہی کرنا ہے ۔ میں چند دنوں سے سخت بیمار ہوں ۔علاج جاری ہے ، گناہ گار ہوں ۔دعائے مغفرت کرتا رہتا ہوں۔

تصویر میں لکھی گئی تحریر کے مطابق ڈاکٹرعبدالقدیر نے عوام سے دعا کی درخواست کرتے ہوئے کہ اکہ آپ سب سے درخواست ہے کہ میری صحتیابی کی دعا کریں میری وفات کے بعد پورے پاکستان کے ہر شہر ہر گاﺅں ہر گلی کوچے میں آپ نے میرے لیے نماز جنازہ پڑھنا ہے ۔اور دعائے مغفرت کرنا ہے ۔ میں نے دل و جان ، خون ، پسینہ سے ملک وقوم کی خدمت کی ہے جو کہا گیااس پر عمل کیا ، کوئی غلط کام نہیں کیا ، اور نہ ہی میرے محبت وطن ساتھیوں نے کوئی غلط کام کیا۔

ڈاکٹرعبدالقدیر نے کہا کہ میرا اللہ میرا گواہ ہے ، میں جہاں چاہتا جاتا کھرب پتی ہو جاتا ، مجھے پاکستان عزیز تھا، آپ عزیز تھے، آپ کی حفاظت و سلامتی میرا فرض تھا ، میں دسمبر 1971 کو کبھی نہ بھلا سکا،والسلام، طالب دعا، آپ کا ڈاکٹر عبدالقدیر خان ، (نوٹ) آپ نے محسن پاکستان ، محافظ پاکستان کے القاب سے نوازا ہے ، تہہ دل سے شکر گزار ہوں۔ پاکستان زندہ باد“

حامد میر کی جانب سے شیئر کی گئی اس تصویر کے بعد سوشل میڈیا صارفین دل کھول کر اس عظیم انسان کی صحیابی کیلئے دعائیں کررہے ہیں،ایک صارف نے لکھا کہ اللہ پاک ڈاکٹر صاحب کا سایہ تادیر ملک پر سلامت رکھے ،میرا نہیں خیال کہ ان سے بڑا اس وقت اس ملک کا مخلص اور محب وطن ہو۔

 

پلوشہ خان نے لکھا اللہ ان پر اپنا رحم کرے۔

عدیل گل نے دعادی کہ اللہ پاک ہمیں عبدالقدیر خان صاحب جیسے با صلاحیت لوگوں سے محروم نہ کریں۔

 

سید علی نے بھی دعا دیتے ہوئے کہا کہ اللہ نے چاہا تو آپکا نام ہمیشہ زندہ رہے گا اور ملک دشمنوں کو اس ارض پاک کی مٹی بھی نصیب نہیں ہوگی۔ انشاءاللہ

 

دیگر صارفین کی جانب سے بھی ڈاکٹر عبدالقدیر کی جلد صحیتابی کیلئے دعاؤں کا سلسلہ جاری ہے۔ڈاکٹر عبدالقدیر خان کو کورونا ٹیسٹ مثبت آنے پر 26 اگست کو کے آر ایل اسپتال میں داخل کیا گیا تھا اور پھر بعد میں انہیں 28 اگست کو ملٹری اسپتال کے کورونا وارڈ میں منتقل کردیا گیا تھا۔

  • iss haraami fouj nay kab kisi ko bakhsha hay, dallon nay Dr Qadeer ko bhi phansa diya aur woh bhi shareef aadmi tha, chup kargaya, warna agar inkay pol khol deta tou behnchodo ki maa mar jani thi.


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >