راولپنڈی رنگ روڈ اسکینڈل، سابق کمشنر راولپنڈی کی درخواست ضمانت خارج

راولپنڈی رنگ روڈ اسکینڈل،  سابق کمشنر راولپنڈی کی درخواست ضمانت خارج

اینٹی کرپشن کورٹ نے راولپنڈی رنگ روڈ اسکینڈل میں سابق کمشنر راولپنڈی محمد محمود اور پراجیکٹ ڈائریکٹر وسیم تابش کی ضمانت کی درخواستیں مسترد کردی ہیں۔

خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق لاہور کی اینٹی کرپشن کورٹ میں جج راجہ راشد حسین نے ملزمان کی درخواست ضمانت پر سماعت کی، دوران سماعت اینٹی کرپشن اور ملزمان کے وکلاء کے درمیان مباحثہ ہوا جس کے بعد عدالت نے فیصلہ سناتے ہوئے ملزمان کی درخواستیں مسترد کردی ہیں۔

دونوں ملزمان اینٹی کرپشن کی جانب سے مقدمے میں نامزد ہیں ، 28 جولائی کولاہور کی ضلع کچہری نے ملزمان کو جوڈیشل ریمانڈ پرجیل منتقل کیا تھا۔

واضح رہے کہ راولپنڈی رنگ روڈ کرپشن اسکینڈل کی ابتدائی تحقیقاتی رپورٹ میں کسی حکومتی رکن کے ملوث ہونے کے امکان کو رد کیا گیا ہے، اسکینڈل کے سامنے آنے کے بعد اس میں وزیراعظم عمران خان کے معاون خصوصی برائے اوور سیز پاکستانی زلفی بخاری اور رہنما تحریک انصاف غلام سرور خان کے ملوث ہونے کا امکان ظاہر کیا جارہا تھا۔

اسکینڈل کے سامنے آنے کے بعد زلفی بخاری نے اپنے عہدے سے استعفیٰ بھی دیدیا تھا ، تحقیقاتی رپورٹ میں کمشنر راولپنڈی، پراجیکٹ ڈائریکٹر، ڈپٹی ڈائریکٹر اور دیگر ملزمان کے خلاف مقدمات درج کرنے کی سفارش اور دیگر ہاؤسنگ سوسائیٹیز کے خلاف تحقیقات کیلئے کیسز کو نیب کو منتقل کرنے کی تجویز بھی دی تھی۔

واضح رہے کہ راولپنڈی رنگ روڈ کے روٹ میں مبینہ طور پر تبدیلی سے اس منصوبے کے پی سی ون کی لاگت میں 10 ارب روپے کا اضافہ ہوا ، رنگ روڈ کا یہ51اعشاریہ7 کلومیٹر کا حصہ 6 ارب 24 کروڑ روپے میں مکمل ہونا تھا تاہم روٹ میں تبدیلی سے یہ حصہ 66اعشاریہ 3 کلومیٹر پر محیط ہوگیا جس کی لاگت 16 ارب 30 کروڑ تک پہنچ گئی، منصوبے کیلئے خریدی جانے والی زمین میں کرپشن سے قومی خزانے کو 2 ارب 10 کروڑ روپے کا نقصان برداشت کرنا پڑا۔

  • میرے خیال میں تو بڑے پروجیکٹ پاکستان میں بننے ہی نہیں چاہیں کیونکہ بڑے پروجیکٹ میں
    کرپشن بھی اربوں میں ہوتی ہے….اگر کوئی بہت ضروری ہے تو اسکی جگہ چھوٹے چھوٹے
    چار پانچ بنا دو تو کرپشن کم ہو گی…..اب اس میں کیا


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >