عوام کو بجلی کے بل 31 روز کی بجائے 37 روز تک کی بنیاد پر بھیجے جانے کا انکشاف

عوام جو پہلے ہی مہنگائی کی چکی میں پسے ہیں، بجلی آئے نہ آئے بل تو بروقت آتے ہیں اور خوب مہنگے بل آتے ہیں، ایسے میں نیا انکشاف سامنے آگیا، عوام کو بجلی کے بل چے شدہ تیس دن کے بجائے 37دن کی بنیاد پر دیئے جاتے ہیں۔

بجلی کی تقسیم کار کمپنیوں کی جانب سے نیپرا کے قوانین کی خلاف ورزی کا معاملہ سامنے آگیا، نجی ٹی وی کی جانب سے اسکنڈل بے نقاب کیا گیا ہے۔

تحقیقات کے مطابق، 8 ماہ کے دوران ملتان، سکھر، کراچی، لاہور، حیدر آباد، گجرانوالہ اور فیصل آباد کے لاکھوں صارفین کو بجلی کے بل طے شدہ 31 روز کے بجائے 37 روز کی بنیاد پر کئی بار بھیجے گئے ہیں، سب سے زیادہ بل ملتان کی پاور کمپنی میپکو کو بھیجے گئے۔

اکتیس روز میں 300 یونٹ کا بل 3200 روپے ہوتا اس طرح صرف ایک روز کے اضافے سے بلوں میں 600 روپے کا اضافہ ہوتا ہے،یعنی جتنے زیادہ دن اتنے زیادہ ادائیگی کا بوجھ صارف پر پڑے گا۔

رواں سال کے آغاز سے اب تک کے الیکٹرک، فیصل آباد الیکٹرک سپلائی کمپنی، حیدرآباد الیکٹرک سپلائی کمپنی، ملتان الیکٹرک سپلائی کمپنی، گجرانوالہ الیکٹرک سپلائی کمپنی اور سکھر الیکٹرک سپلائی کمپنی نے اپنے صارفین کو مقررہ 31 یوم سے زائد دنوں کا بل ایک یا ایک سے زائد بار بھیجا۔

بعض نے تو 35 سے 37 دن تک کے بل بھی صارفین کو بھیجے، معاملہ سامنے آنے کے بعد نہ حکومت کی جانب سے کوئی ایکشن لیا گیا نہ ہی نیپرا نے کوئی کارروائی کی۔

  • Is baat pr Imran khan aur kha*ssi buzdar ko kut*ty ka L
    Sirf tat*ty chukko kam edr fita Kat udr fita Kat, mehngai ne bond pad di hai sirf pankhy chala kr 15 15 hazar bill aa ra hai, Maa ko L** imran khan teri. bhos*diky agr tery control mai kuch nai L** te Chad aur resign kr awam ki bond na mar

  • Awam pankhay chala kr 15 20 hazar bill de re hai aur ha*rami ma*drch*d Wapda k mulazmen har month free k units ac k mazay uda re han aur garmi mai itna bill de k hum Mar re hai, aur jo units Bach jate hai ye har*ami kut*ty k bachy wapda mulazmen wo units bech kr wo paisa apny baap ka smj kr apni jeeb mai dal lety hai, Imran mad*rch*od Khan ran*di k bachy ko ye sb nazar nai aa ra, Maa k l*ode ab tujy vote nai milne laga ghr baith jain gy kisi ko vote nai Dai gy


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >