سندھ میں سرکاری اسکولوں کیلئے کباڑ کی ڈیسک 29 ہزار میں خریدنے کی تیاری

سندھ میں عجب کرپشن کی ایک اور غضب کہانی سامنے آگئی، سرکاری اسکولوں کیلئے کباڑ کی ایک ڈیسک 29 ہزار روپے میں خریدنے کی تیاری شروع ہوگئی۔

خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق محکمہ تعلیم سندھ نے سرکاری اسکولوں کے طلباء کے بیٹھنے جو ڈیسک خریدنے کی منظوری دی گئی وہ کباڑ کی فی ڈیسک 29 ہزار روپے کے عوض خریدی جائے گی۔

رپورٹ کے مطابق ان ڈیسکس کو کباڑ کے ٹکڑوں سے بنایا جائے گا جس میں 23 جوڑ لگے ہوں گے، محکمہ تعلم سندھ نے یہ ٹھیکہ ایک کمپنی کو اسی سال میں دیا ہے جس سال میں پہلے ایک ڈیسک 8 ہزار روپے میں خریدی گئی تھی۔

وزیر تعلیم سندھ سردار شاہ کا کہنا ہے کہ اسکولوں کے بچوں کیلئے فرنیچر خریدنے کا سلسلہ مکمل ہوچکا ہے، رواں برس 5 لاکھ بچوں کو اسکولوں میں فرنیچر فراہم کریں گے جبکہ اگلے سال یہ تعداد 15 لاکھ تک پہنچ جائے گی۔

یادرہے کہ سابق وزیر تعلیم سعید غنی کے دور میں محکمہ تعلیم سندھ نے 16 لاکھ ڈیسکس کی خریداری کیلئے ایک من پسند کمپنی کو ٹھیکہ دیا تھا۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >