کراچی کے ساحلی علاقے میں مافیا آبی حیات کی جانوں سے کھیلنے لگا

کراچی کے ساحلی علاقے میں مافیا آبی حیات کی جانوں سے کھیلنے لگا

کراچی میں ساحل سمندر پر ابراہیم حیدری کے علاقے میں آٹوموبائل میں استعمال ہونے والی بیٹریوں کو دوسری بار قابل استعمال بنانے کے لیے ایک مافیا سرگرم ہے جو کہ بیٹریوں میں استعمال ہونے والے کیمیکل اور تیزاب کو سمندری پانی میں شامل کر رہا ہے۔

ابراہیم حیدری میں جمعہ گوٹھ سے تعلق رکھنے والے ایک مقامی صحافی نے انکشاف کیا ہے کہ کئی روز سے ساحل سمندر پر پُراسرار سرگرمی جاری ہے جس میں نامعلوم لوگ بوریوں میں بھر کر بیٹریوں کے اندر استعمال ہونے والے آلات لاتے ہیں جو کہ تیزاب اور کیمیکل لگے ہوتے ہیں۔

اس صحافی نے انکشاف کیا کہ بیٹریوں میں استعمال ہونے والے اس میٹیریل کو سمندر کے پانی میں دھو کر دوبارہ قابل استعمال بنایا جاتا ہے جس سے ان پر لگا تیزاب اور کیمیکل سمندری پانی میں شامل ہو جاتا ہے۔ جب کہ اس کام میں ملوث افراد کا کہنا ہے کہ وہ یہاں کھاد لے کر آتے ہیں۔

مقامی لوگوں اور ماہی گیروں نے مطالبہ کیا ہے کہ اس غیر قانونی سرگرمی کو فی الفور روکا جائے تاکہ نہ صرف آبی حیات بلکہ مقامی ماہی گیروں کو درپیش اس نقصان سے بچایا جا سکے۔

  • is ke zimaydar bhi awam hai.
    jis ne apna haq marney waley se sawal naheen kya.
    magar purani batteries recycle karney wala mafia nazar aatra hai.
    karachi walo ko to advantage hai ke uun ke pas samander hai.
    baqi pakistan ke pas sirf maryam nawaz hai.


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >