حکومتی معاشی پیکیج نا مکمل اور ناکافی ہے،شہباز شریف

تفصیلات کے مطابق پاکستان مسلم لیگ نون کے صدر اور قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر میاں شہباز شریف کا ملک میں لاک ڈاؤن کے دوران حکومت کی جانب سے دیئے گئے معاشی پیکیج پر کہنا تھا کہ لاک ڈاؤن کے دوران حکومت کا دیا گیا معاشی پیکیج نامکمل اور ناکافی ہے۔ جبکہ اسے مزید بہتر بنانے کے لیے اپوزیشن کی جانب سے دی گئی تجاویز کو شامل کیا جائے۔

اپوزیشن لیڈر کا اپنے بیان میں کہنا تھا کہ لاک ڈاون اور مشکل ترین صورتحال میں لوگوں کے لئے خوراک اور ادویات کی دستیابی یقینی بناتے ہوئے یہ ممکن بنایا جائے کہ یوٹیلیٹی سٹورز کے ذریعے لوگوں کو ادویہ اور خوراک گھر میں بیٹھے فراہم کی جائے جبکہ لوگ بھی گھروں میں رہتے ہوئے آرڈر لکھوائیں اور ان کا حکومت سے مطالبہ کرتے ہوئے کہنا تھا کہ حکومت سے اپیل ہے کہ بیت المال، بے نظیر انکم سپورٹ اور دیگر سبسڈیز سے خوراک اور اشیائے ضروریہ سستی کریں۔

اپوزیشن لیڈر نے ڈاکٹرز، نرسز اور طبی عملےکو سلام پیش کیا اور حکومت سے مطالبہ کیا کہ ڈاکٹرز، نرسز، پیرامیڈیکس اور صحت کے میدان میں کام کرنے والے ہمارے بیٹے اور بیٹیاں ہمارے فرنٹ لائن سولجرز ہیں جن کی حکومت کی جانب سے ہر ممکن حفاظت یقینی بنائی جائے۔ تاکہ یہ فرنٹ لائن سولجرز پاکستان میں اپنی خدمات انجام دیتے رہیں۔

یاد رہے کہ حکومت نے لاک ڈاون کے باعث معاشی پیکج کے تحت مشکلات کا شکار خاندانوں کو 3 ہزار روپے ماہانہ دینے کا اعلان کیا ہے جبکہ کورونا وائرس کی موجودہ صورتحال کے پیش نظر حکومت نے پیٹرول اور ڈیزل بھی 15 روپے فی لیٹر سستا کر دیا ہے۔تاکہ عوام کو ریلیف فراہم کیا جائے۔

  • This M F , Shehbaz knows very well why is this package insufficient, and where is the Pakistan’s treasure hidden, let this MF bring some money back instead of trying to spread caminavirus

  • We must be thankful to Shahbaz Shareef and his family’s help to provide free treatment to people of UK.
    Also to introduce new treatment methods for critically ill people in restaurants.
    I hope Shahbaz will open their family hospitals for free treatment to commoners.


  • 24 گھنٹوں کے دوران 🔥

    View More

    From Our Blogs in last 24 hours 🔥

    View More

    This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept

    >