کیا حکومت نے ریٹائرڈ سرکاری ملازمین کی”پنشن“ ختم کرنے کا فیصلہ کرلیا ہے؟

حکومت سرکاری ملازمین کی پنشن ختم نہیں کررہی، سسٹم بنارہی ہے،حبیب اکرم

حکومت کا سرکاری ملازمین کی پنشن ختم کرنے کا فیصلہ، سنیے حبیب اکرم کا تجزیہ

حکومت کا سرکاری ملازمین کی پنشن ختم کرنے کا فیصلہ، سنیے حبیب اکرم کا تجزیہمکمل پروگرام دیکھئیے:https://video.dunyanews.tv/index.php/en/pv/Ikhtalafi%20Note/20775/ep-23974/All/2020-07-11

Posted by Ikhtalafi Note on Saturday, July 11, 2020

سرکاری ملازمین کیلئے بڑا دھچکا۔۔ حکومت سرکاری ملازمین کی پنشن ختم کرنے کا سوچ رہی ہے، یعنی جو ملازمین ریٹائر ہوں ان کیلئے ایسا کوئی انتظام کیا جائے جس کے تحت ریٹائرملازمین یک مشت رقم دے دی جائے گی۔ اس کے علاوہ ملازمین کی ریٹائرمنٹ کی عمر کے حساب سے بھی بات کی جارہی ہے کہ پچپن سے ساٹھ سال کی عمر میں ریٹائر ہوجائے۔

حکومت کے اس فیصلے پر نجی ٹی وی سے گفتگو میں تجزیہ کار حبیب اکرم نے کہا کہ حکومت پنشن نہیں ختم کررہی بلکہ حکومت ایسا سسٹم لارہی ہے کہ ہم پنشن کو نکالیں بجٹ میں سے ہے اور اس طریقے جیسے اب بھی ہوتا ہے کہ ہر سرکاری ملازمین کی تنخوا کا کچھ حصہ گریجویٹی کی صورت میں جمع ہوتا ہے اور پھر آہستہ آہستہ بڑھتا چلا جاتا ہے اور پھر اس پر ٹیکس لگتا ہے اور پھر پنشن دی جاتی ہے۔

حبیب اکرم نے بتایا کہ اب حکومت یہ کرنا چاہ رہی ہے کہ پنشن کو خزانے سے نکالا جائے، اپنے بجٹ سے نکالا جائے، کیونکہ بجٹ میں ہرگزرتے دن کے ساتھ پنشن کا بوجھ بڑھتا جارہاہے، یعنی اگر چاروں صوبوں کا دیکھا جائے تو تقریباً پندرہ سو ارب روپے پنشن میں دیے جاتے ہیں۔ جب پنشن میں اتنی رقم دی جائے گی تو ایک وقت ایسا آئے گا کہ پنشن تو کیا تنخواہ کے پیسے بھی نہیں ہونگے۔ ایسا نہیں کہ پاکستان میں ظلم ہورہاہے بھارت میں ایسا ہوچکا ہے۔

حبیب اکرم نے کہ اگر آپ کو معاشی طور پربچانا ہے تو پھر پنشن کیلئے یہ سسٹم لانا ہوگا، ورنہ پھر ایسا ہوگا کہ بجٹ میں صرف جتنے ٹیکس ہونگے اتنی ہی پنشن ہوگی۔ اور ملازمین بھی کم کرنا ہونگے، جب ایک انسان اپنے سارے کام خود کرسکتا ہے تو پھر اس کیلئے پی اے اور دیگر ملازمین کی ضرورت نہیں، کیونکہ اس طرح ایک بجائے چار ملازمین کو تنخواہیں دی جارہی ہیں۔

حکومت کا کہنا ہے کہ ملازمین کو پنشن اور گریجویٹی دے کر ریٹائرکیا جائے اور ریٹائرمنٹ کے طریقہ کار کیلئے تین کمیٹیاں بنائی جائیں، پہلی کمیٹی گریڈ ایک سے سولہ تک کے ملازمین کیلئے سفارشات دے گی۔دوسری کمیٹی گریڈ سترہ سے انیس تک کے ملازمین کیلئے سفارشات دے گی۔تیسری کمیٹی گریڈ بیس سے بائیس تک کے ملازمین کے معاملات دیکھے گی۔

  • This Govt is making us regret everyday forsupporting them.Every fucking day a new leaf implemented from IMF agenda.This govt is making us IMF slave and this gandu PM used to give lectures on not bowing to IMF.

  • Paying lump some pension at the time of retirement is a sensible idea and followed by all private companies/NGOs. The pensioner can keep the money in National Saving Centre/Pensioners saving accounts in Banks etc and get monthly returns out of it, instead of the government taking life long responsibility, employing thousands of people to do this avoidable chore. Also regular corruption in monthly disbursement of pensions will be eliminated.


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >