پاکستان کا نیا نقشہ:سابق بھارتی جنرل نے اپنی حکومت کے لئے خطرے کی گھنٹی بجادی

پاکستان کی جانب سے جاری کئے گئے نئے سیاسی نقشے پلے کریں انڈین میڈیا کی جانب سے پاکستان کا خوب مذاق بنایا گیا تھا اور نقشے کو محض سیاسی پروپیگنڈا کہا جارہا تھا، لیکن بھارتی جرنیل نے اپنی حکومت کو خبردار کرتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان کی جانب سے جاری کیے گئے نقشے کو غیر سنجیدہ نہ لیا جائے۔

بھارتی جرنیل گرمیت سنگھ کا انڈین چینل کو اپنے انٹرویو میں اپنی حکومت کو خبردار کرتے ہوئے کہنا تھا کہ پاکستان کی جانب سے جاری کیے گئے نقشے کی سنجیدگی کو سمجھیں، نئی جاری کئے گئے سیاسی نقشے کی اہمیت اور شدت کو سمجھنا ہو گا ورنہ بھارت کو بھاری نقصان اٹھانا پڑے گا، یہ نقشہ پاکستان اور چین کی مشترکہ منصوبہ بندی کا ایک پہلو ہے۔

صابر شاکر کا اپنے پروگرام دی پورٹرز میں بھارتی جرنیل کی بوکھلاہٹ اور پاکستان کی جانب سے جاری کیے گئے نقشے کی فلاسفی سمجھاتے ہوئے کہنا تھا کہ جب پاکستان نے حکومت کی جانب سے پاکستان کا نیا سیاسی نقشہ جاری کیا گیا تو قوم کو اس کی سمجھ نہیں آئی تھی لیکن اب آہستہ آہستہ قوم نئے نقشے کی اہمیت کو سمجھنے لگی ہے۔

اسی پروگرام میں سینئر صحافی چوہدری غلام حسین کا بھارتی جرنیل کی بوکھلاہٹ پر اپنے تجزیہ میں کہنا تھا کہ بھارتی جرنیل نے اس لئے اپنی حکومت کو خبردار کیا ہے کیوں کے اسے معلوم ہے کہ جو آج کے پاکستان میں سیاسی نقشہ جاری کیا ہے کل کو وہ جغرافیائی طور پر تسلیم کر لیا جائے گا جس میں مقبوضہ کشمیر کے علاوہ سیاچن کا علاقہ بھی بھی موجود ہے۔

صابر شاکر کا اپنے پروگرام میں بھارتی حکومت کی تشویش اور چین کے کردار پر واضح کرتے ہوئے کہنا تھا کہ لداخ میں چین کے ہاتھوں بری طرح پسپائی کا سامنا کرنے کے بعد دہلی حکومت اب یہ سوچنے پر مجبور ہوگئی ہے کہ یہ سب کچھ بلاوجہ تو نہیں ہو رہا، کیوں کہ خطے کے سب سے چھوٹے ملک نیپال نے بھارتی حکومت کے خلاف آواز اٹھانا شروع کر دی ہے، بھارتی حکومت اس وقت اس تشویش میں مبتلا ہے کہ نیپال کو آخر کس طاقتور ملک نے تھپکی دی ہوئی ہے؟


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >