پاکستان 14 اگست 1947 کو معرض وجود میں آیا یا 15 اگست 1947 کو؟

پاکستان 14 اگست 1947 کو معرض وجود میں آیا یا 15 اگست 1947 کو؟ حامد میر نے نئی بحث چھیڑدی

اپنے آج کے روزنامہ جنگ کے کالم میں حامد میر کا کہنا تھا کہ اس سوال پر بہت زیادہ بحث ہوچکی ہے اور لکھا بھی جاچکا ہے کہ پاکستان کا اصلی یومِ آزادی 14اگست ہے یا 15اگست؟

حامد میر کے مطابق تحقیق یہی ثابت کرتی ہے کہ برطانوی حکومت کی دستاویزات کے مطابق ہندوستان کی طرح پاکستان بھی 15اگست کو معرض وجود میں آیا لیکن پھر جولائی 1948میں حکومتِ پاکستان نےیومِ آزادی کی پہلی سالگرہ 15اگست کے بجائے 14اگست 1948کو منانے کا فیصلہ کیا۔حامد میر نے مزید لکھا کہ 9جولائی 1948کو حکومتِ پاکستان نے جو ڈاک ٹکٹ جاری کئے ان پر بھی پاکستان زندہ باد کے ساتھ 15اگست 1947کی تاریخ درج تھی ۔

حامد میر کا کہنا تھا کہ آخر پاکستان نے 14 اگست کو ہی یوم آزادی منانے کا فیصلہ کیوں کیا؟ یہ ایک ایسا سوال ہے جس کا جواب تلاش کرنے کیلئے تحقیق کی جائے تو بانی پاکستان قائداعظم محمد علی جناحؒ کی شخصیت کے کچھ ایسے پہلو سامنے آتے ہیں جنہیں نظرانداز کیا گیا ہے۔اسٹینلے والپرٹ سمیت کئی محققین نے قائداعظمؒ پر کتابیں لکھیں لیکن ایک پہلو نظرانداز کرگئے کہ قائداعظم ؒ نے 15اگست کے بجائے 14اگست کو یوم آزادی منانے کے فیصلے کی منظوری کیوں دی؟

حامد میر کے مطابق بعض سرکاری دستاویزات کے مطابق پاکستان کا یوم آزادی 14اگست کو منانے کی تجویز پر پہلی دفعہ 29جون 1948کو پاکستان کے پہلے وزیراعظم لیاقت علی خان کی صدارت میں کابینہ کے اجلاس میں غور ہوا اور یہ تجویز قائداعظم کی منظوری سے مشروط کی گئی اور پھر ایک اور دستاویز کے مطابق قائداعظمؒ نے 14اگست کو یومِ آزادی منانے کی منظوری دیدی تھی۔

حامد میر کے مطابق پاکستان میں ٹرانسفر آف پاور کی تقریب 14اگست 1947کو ہوئی۔۔ 14اور 15کی درمیانی شب قیام پاکستان کا اعلان ہوا۔ اکثر محققین کے خیال میں 15اگست کو 27رمضان المبارک تھی۔اس دن مائونٹ بیٹن ہندوستان کا گورنر جنرل بنا جہاں پنڈت مائونٹ بیٹن زندہ باد کے نعروں سے ان کا استقبال ہوا۔لارڈ ماؤنٹ بیٹن پاکستان کے گورنر جنرل بننا چاہتے تھے لیکن قائداعظم نے انکار کردیا اور قائداعظم نے لارڈ ماؤنٹ بیٹن کے برعکس تاج برطانیہ کا وفادار رہنےکا حلف اٹھانے کی بجائے پاکستان کا حلف اٹھایا۔

  • حامد میر ایک گھٹیا ترین صحافی ہے اور ہر اس بات کو اچھالتا ہے جو قوم کو تقسیم کرنے کا باعث بنتی ہو۔ پاکستان کو توڑنے کی سازش کو کامیاب بنانے والوں میں اس کا باپ بھی پیش ہیش تھا، اسی کامیابی کے اعتراف میں بنگلہ دیش کی حکومت نے اس کے باپ کو سرکاری اعزاز سے بھی نوازا، وہ اعزاز حامد میر نے ہی وصول کیا اور اپنے غدار ہونے کا ثبوت دیا۔

  • What’s the point in this debate? Is it worth discussing either?
    The logic is simple:
    15th August is the announced date for independence of India & Pakistan.
    Pakistan is in west of Delhi, India. So according to geographical time zones – also called longitudes – Pakistan is 30 minutes behind India.
    So on 15th August 1947 at 00:00 Hrs in Delhi, in Karachi it was still 11:30 PM of 14th August.
    Problem solved….

  • I abuse that person who could not kill this crock Mamid Meer (Check his DNA ..must belongs to Mir Jafar & Mir Sadaq )If this GHADDAR E EWATAN would have been killed in attack ther wont be any problem in Pak Sahafat


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >